قید خانے میں سکینہ یہ بیاں کرتی تھی
کیا اندھیرا ہے پھوپھی

شمع منگوایئے ورنہ میں نہیں جینے کی
کیا اندھیرا ہے پھوپھی

اپنے سینے سے لگا لو میں تمہارے صدقے
گود میں لے لو مجھے
ورنہ پچھتائو گی زندہ نہ رہوں گی میں کبھی
کیا اندھیرا ہے پھوپھی

آج کی شب کو بھی کیا بابا نہیں آئیں گے
مجھ کو تڑپائیں گے
اُن کے سینے پہ اگر سوتی تو نیند آ جاتی
کیا اندھیرا ہے پھوپھی

بابا آ جاتے تو پھر شمر کو ہوتا معلوم
کون ہے یہ معصوم
کیا سمجھ کر مجھے یوں گُھرکیاں دیتا ہے شقی
کیا اندھیرا ہے پھوپھی

پانی لانے کو کہا روٹھ گئے مجھ سے چچا
آپ ہی سوچیں ذرا
ہوتے عموں تو میں اس طرح تماچے کھاتی
کیا اندھیرا ہے پھوپھی

بعد میرے جو یہاں ہوئے پِدر کا آنا
اُن سے یہ فرمانا
مر گئی گُھٹ کر اندھیرے میں تمہاری بیٹی
کیا اندھیرا ہے پھوپھی


qaid qane may sakina ye bayan karti thi
kya andhera hai phupi

shama mangwaiye warna mai nahi jeene ki
kya andhera hai phupi

apne seene se lagalo mai tumhare sadqe
godh may lelo mujhe
warna pachtaogi zinda na rahoongi mai kabhi
kya andhera hai phupi

aaj ki shab ko bhi kya baba nahi aayenge
mujhko tadpayenge
unke seene pe agar soti to neend aajati
kya andhera hai phupi

baba aajate to phir shimr ko hota maloom
kaun hai ye masoom
kya samajkar mujhe yun gurkhiyan deta hai shaqi
kya andhera hai phupi

pani laane ko kahan rooth gaye mujhse chacha
aap hi sochay zara
hote ammu to mai is tarha tamache khaati
kya andhera hai phupi

baad mere jo yahan hoye pidar ka aana
unse ye farmana
margayi ghutke andhere may tumhari beti
kya andhera hai phupi
Noha - Kya Andhera Hai Phupi

Nohaqan: Sachey Bhai
Download Mp3
Listen Online