نثار کرچکے جب راہِ حق میں اصغر کو
تب آئے خیمے میں شہہ رخصتِ مقرّر کو
بیان کیسے کروں بیکس کے منظر کو
تھی پیش منزلیں دُشوار ابنِ حیدر کو
کوئی نہ تھا جو کرتا سوار سرور کو
بیٹھایا گھوڑے پہ ہمشیر نے برادر کو

ہر اک بی بی کا دل غم سے تھا تہوبالا
نہ کوئی مونس و یاور نہ گود کا پالا
کوئی لپٹتی تھی دامن سے کرتی تھی نالہ
کھرے تھے سر کو جھکائے ہوئے شہہ والا
کوئی نہ تھا جو کرتا۔۔۔

بلند ہوتی تھی خیمے سے العتش کی صدا
سکینہ کہتی تھی مقتل سے جلد آئو چچا
کبھی پکارتی کوئی کہ آئو شیرِ خدا
مدد کاوقت ہے شبیر ہورہے ہیںجدا
کوئی نہ تھا جو کرتا۔۔۔

پکاری زینبِ مضطر کہاں ہو اے اکبر
اکیلا فوجِ عدو میں چلا نبی کا پسر
خبر نہ لو گے چچا کی اے قاسمِ مضطر
کہاں پہ ہے میرا شیرِ جری وفا پیکر
کوئی نہ تھا جو کرتا۔۔۔

یہ نوحہ کرتی تھی مقتل میں زینبِ کبریٰ
بچانے والا کوئی میرے بھائی کا نہ رہا
گلو بُریدہ سے دیتا تھا ہر شہید صدا
ملے حیات تو پھر ہو ہزار بار فدا
کوئی نہ تھا جو کرتا۔۔۔

کہا حسین نے زینب سے الوداع ہمشیر
بُلارہے ہیں پئے جنگ کب سے یہ بے پیر
خیال رکھنا سکینہ کا ہے بہت ہی صغیر
معاف کرنا جو کردے کبھی کوئی تقصیر
کوئی نہ تھا جو کرتا۔۔۔

لگام تھا م کے گھوڑے سے بولے یہ شبیر
ہمارے ساتھ ہے جو ظلم و ستم کا تُو بھی اسیر
سفر ہے آخری تجھ پر میرا یہ اے دلگیر
تُو ہی ہے مونس و غمخوار میرا وقتِ اخیر
کوئی نہ تھا جو کرتا۔۔۔

امام ِوقت سے جب ذولجناح نے یہ سنا
زبانِ حال سے وہ بے زباں ہوا گویا
حضور آپ پہ سو بار میری جان فدا
زہِ نصیب کے یہ فرض آپ نے سونپا
کوئی نہ تھا جو کرتا۔۔۔

میں جانتا ہوں کہ یہ آخری سواری ہے
کرو ںجہاد یہ خود مجھ کو بے قراری ہے
سموں سے لپٹی ہوئی آپ کی دُلاری ہے
میرے پدر کو نہ لیجا یہ لب پہ جاری ہے
کوئی نہ تھا جو کرتا۔۔۔

انیس رخصتِ آخر کے وقت تھا محشر
کوئی تو پیٹتی تھی سینہ کوئی بی بی سر
کبھی پکارتی تھی اپنے پیاروں کو رُوکر
کہاں پہ ہو زرا یہ حال دیکھ لو آکر
کوئی نہ تھا جو کرتا۔۔۔


nisaar kar chuke jab raahe haq may asghar ko
tab aaye qaime may sheh ruqsate mukarrar ko
bayaan kaise karoon bekas ke manzar ko
thi pesh manzilein dushware ibne hyder ko
koi na tha jo karata sawaar sarwar ko
bithaya ghode pe hamsheer ne biradar ko

har ek bibi ka dil gham se tha taho-bala
na koi monis-o-yawar na godh ka paala
koi lipat-ti thi daaman se kartii thi naala
khade thay sar ko jhukaye huwe shahe wala
koi na tha jo karata....

buland hoti thi qaime se al-atash ki sada
sakina kehti thi maqtal se jald aao chacha
kabhi pukaarti koi ke aao shere khuda
madad ka waqt hai shabbir ho rahe hai juda
koi na tha jo karata....

pukari zainab-e-mustar kahan ho ay akbar
akela fauje adoo may chala nabi ka pisar
qabar na loge chacha ki ay qasime mustar
kahan pe hai mera shere jari wafa paykar
koi na tha jo karata....

ye nowha karti thi maqtal may zainab-e-kubra
bachane wala koi mere bhai ka na raha
gulu bureeda se deta tha har shaheed sada
mile hayaat to phir ho hazaar baar fida
koi na tha jo karata....

kaha hussain ne zainab se alvida hamsheer
bula rahe hai paye jang kaf se bepeer
khayal rakhna sakina ka hai bahut hi sagheer
muaf karna jo karde kabhi koi tafseer
koi na tha jo karata....

lagaam thaam ke ghode ke bole ye shabbir
hamare saath hai zulmo sitam ka tu bhi aseer
safar hai aakhri tujhpar mera ye ay dilgeer
tuhi hai munis-o-gham khwar mera waqte akheer
koi na tha jo karata....

imam-e-waqt se jab zuljana ne ye suna
zubaane haal se wo bezubaan huwa goya
huzoor aap pe sau baar meri jaan fida
zehe naseeb ke ye farz aap ne sawmpa
koi na tha jo karata....

mai jaanta hoo ke ye aakhri sawari hai
karoo jihad ye khud mujko beqarari hai
sumo se lipti hui aapki dulaari hai
mere padar ko na leja ye lab pe jaari hai
koi na tha jo karata....

anees rukhsate aakhir ke waqt tha mehshar
koi to peet-ti thi seena koi bibi sar
kabhi pukarti thi apne pyaro ko rokar
kahan pe ho zara ye haal dekh lo aakar
koi na tha jo karata....
Noha - Koi Na Tha Jo
Shayar: Anees
Nohaqan: Nadeem Sarwar
Download Mp3
Listen Online