کوئی غیبت میں بیٹھا خون کے آنسو بہاتا ہے
اُسے زینب کا جب بازار جانا یاد آتا ہے

کوئی غمخوار غیبت میں میسر ہی نہیں اُس کو
سو تنہائی میں ہر نوحہ وہ خود کو ہی سُناتا ہے
کوئی غیبت میں بیٹھا ۔۔۔۔

اُنہی گلیوں میںچل چل کر جہاں چلتی رہی زینب
نشاں زینب کے قدموں کے وہ ہاتھوں سے مٹاتا ہے
کوئی غیبت میں بیٹھا ۔۔۔۔

بقیے میںصدائے واہ حسینا گونج اُٹھتی ہے
وہ جب بھی قبرِ زہرا آکے سینے سے لگاتا ہے
کوئی غیبت میں بیٹھا ۔۔۔۔

نہیں تھمتے ہیں اُس کی آنکھ سے آنسو کسی صورت
اُسے بے شیر کا جب مسکرانہ یاد آتا ہے
کوئی غیبت میں بیٹھا ۔۔۔۔

پدر کی گود کی خاطر سکینہ جب بھی روتی ہے
وہ لوری باپ کے لہجے میں بیٹی کو سناتا ہے
کوئی غیبت میں بیٹھا ۔۔۔۔

خیال آتا ہے جب بھی پردئہ زینب کا مہدی کو
کبھی تلوار پر وہ ہاتھ رکھتا ہے ہٹاتا ہے
کوئی غیبت میں بیٹھا ۔۔۔۔

وہ حُجت ہے اُسی کا کام ہے اِس درد کو سہنا
کسی خاکی کے دل میں جون یہ غم کب سماتا ہے
کوئی غیبت میں بیٹھا ۔۔۔۔


koi ghaibat may baitha khoon ke aansoo bahata hai
usay zainab ka jab bazaar jaana yaad aata hai

koi ghamkhar ghaibat may mayassar hi nahi usko
so tanhaai may har nauha wo khud ko hi sunaata hai
koi ghaibat may baitha...

unhi galiyon may chal chal kar jahan chalti rahi zainab
nishan zainab ke qadmo ke wo haathon se mitata hai
koi ghaibat may baitha...

baqiye may sadaye wa hussaina goonj uth-ti hai
wo jab bhi qabre zehra aake seene se lagaate hai
koi ghaibat may baitha...

nahi samjhe hai uski aakh aansoo kisi soorat
usay baysheer ka jab muskurana yaad aata hai
koi ghaibat may baitha...

pidhar ki godh ki khaatir sakina jab bhi roti hai
wo lori baap ke lehje may beti ko sunaata hai
koi ghaibat may baitha...

qayaal aata hai jab bhi pardaye zainab ka mehdi ko
kabhi talwaar par wo haath rakhta hai hatata hai
koi ghaibat may baitha...

wo hujjat hai usi ka kaam hai is dard ko sehna
kisi khaaki ke dil may jaun ye gham kab samaata hai
koi ghaibat may baitha...
Noha - Koi Ghurbat May Baitha

Nohaqan: Mir Hassan Mir
Download Mp3
Listen Online