کس طرح اپنی تباہی کی خبر لے جائے
پاس زینب کے بچا کیا ہے جو گھر لے جائے

لے گئی رات کا سایہ تو سروںسے اُن کے
اب یتیموں کو ہوا چاہے جدھر لے جائے
پاس زینب کے۔۔۔
کس طرح اپنی ۔۔۔

ایک دو گھر کے چراغوں کو بجھادے لیکن
چھین کر کوئی نہ اُمیدِ سحر لے جائے
پاس زینب کے۔۔۔
کس طرح اپنی ۔۔۔

پائوں زخمی ہے تو راہوں میں ہے پتھر کانٹے
جانے عابد کو کہاں تک یہ سفر لے جائے
پاس زینب کے۔۔۔
کس طرح اپنی ۔۔۔

بولی ہوں گی علی اکبر کو سجا کر زینب
چاند کو میرے کسی کی نہ نظر لگ جائے
پاس زینب کے۔۔۔
کس طرح اپنی ۔۔۔

سوچتی ہوں گی یہ بانو میرا بچ جائے سہاگ
حُرملہ مجھ سے میرا لختِ جگر لے جائے
پاس زینب کے۔۔۔
کس طرح اپنی ۔۔۔

رکھ کے آنکھوں کے سلگتے ہوئے اس مقتل میں
لاش بچوں کی کہ شبیر کا سر لے جائے
پاس زینب کے۔۔۔
کس طرح اپنی ۔۔۔

شاعری کی میری معیار یہی ہوگی نظیر
ذکرِسرورمیں مجھے موت اگر لے جائے
پاس زینب کے۔۔۔
کس طرح اپنی ۔۔۔


kis tarha apni tabahi ki khabar le jaaye
paas zainab ke bacha kya hai jo ghar lejaye

legayi raat ka saaya to saron se unke
ab yateemo ko hawa chahe jidhar le jaaye
paas zainab ke....
kis tarha apni....

ek do ghar ke charaghon ko bujha de lekin
cheen kar koi na umeedein sehar le jaaye
paas zainab ke....
kis tarha apni....

paun zakhmi hai to raahon may hai pathar kaante
jaane abid ko kahan tak ye safar le jaaye
paas zainab ke....
kis tarha apni....

boli hongi ali akbar ko saja kar zainab
chand ko mere kisi ki na nazar le jaaye
paas zainab ke....
kis tarha apni....

sochti hogi ye bano mera bach jaye suhaag
hurmula mujhse mera laqte jigar le jaaye
paas zainab ke....
kis tarha apni....

rakh ke aankhon ke sulagte hue is maqtal may
laash bachon ki ke shabbir ka sar le jaaye
paas zainab ke....
kis tarha apni....

shayari ki meri meyaar yehi hogi nazeer
zikr e sarwar may mujhe maut agar le jaaye
paas zainab ke....
kis tarha apni....
Noha - Kis Tarha Apni
Shayar: Nazeer
Nohaqan: Mir Hassan Mir
Download Mp3
Listen Online