خود باپ جواں لال کی میت کو اُٹھائے

یا رب کسی دشمن پہ بھی یہ وقت نہ آئے
خود باپ جواں۔۔۔

شہہ سے علی اکبر کا جنازہ نہ اُٹھے گا
دریا پہ کوئی جاکے علمدار کو لائے
خود باپ جواں۔۔۔

یوں تیز قدم جانبِ خیمہ چلے سرور
گھبرا کے کہیں رن میں نہ زینب نکل آئے
خود باپ جواں۔۔۔

سہرے جگہ دیکھے جواں بیٹے کی میت
تقدیر کسی مان کو یہ منظر نہ دیکھائے
خود باپ جواں۔۔۔

یوں شام پہنچنے کی تکلم کو ہے جلدی
نوحہ علی اکبر کا وہ زینب کو سُنائے
خود باپ جواں۔۔۔


khud baap jawan laal ki mayyat ko uthaye

ya rab kisi dushman pe bhi ye waqt na aaye
khud baap jawan....

sheh se ali akbar ka janaza na uthega
darya pe koi jaake alamdaar ko laaye
khud baap jawan....

yun tez qadam jaanibe qaima chale sarwar
ghabrake kahin ran may na zainab nikal aaye
khud baap jawan....

sehre ki jagah dekhe jawan bete ki mayyat
taqdeer kisi maa ko ye manzar na dikhaye
khud baap jawan....

yun shaam pahunchne ki takallum ko hai jaldi
nauha ali akbar ka wo zainab ko sunaaye
khud baap jawan....
Noha - Khud Baap Jawan
Shayar: Mir Takallum
Nohaqan: Mir Hassan Mir
Download Mp3
Listen Online