ہا ے غریب ہا ےحسین
خزاں نے لوٹ لی ساری بہار اک دن میں
حسین قتل ہوے کتنی بار اک دن میں
خزاں نے لوٹ

کہاں چلے گئے عابد پھوپی سے کہتے تھے
اکیلا چھوڑ کے سب جانثار اک دن میں
خزاں نے لوٹ

یہ بات پوچھے تو عابد کی بیکسی سے کوئی
بناے کیسے بہتر مزار اک دن میں
خزاں نے لوٹ

ابھی تو شام تلک ہے سفر سکینہ کا
طمانچے اتنے نہ بچی کو مار اک دن میں
خزاں نے لوٹ

انگوٹھی کوئی عبا کوئی لے گیا کرتا
لٹی یوں لاشے غریب الدیار اک دن میں
خزاں نے لوٹ

جوان بیٹے کی میت پی کہ رہے تھے حسین
میں لٹ گیا میرے پروردگار اک دن میں
خزاں نے لوٹ

تمہارے بابا کے زخموں میں زخم ہے بی بی
یہ زخم کیسے کروگی شمار اک دن میں
خزاں نے لوٹ

دل مریض نے جھیلے ہیں اتنے غم اختر
قلم سے ہونا سکیںگے شمار ا دن میں
خزاں نے لوٹ


haye ghareeb haye hussain
khiza ne loot li saari bahaar ek din may
hussain qatl huwe kitni baar ek din may
khiza ne loot...

kaha chale gaye abid phuphi se kehte thay
akela chor ke sab janisaar ek din may
khiza ne loot...

ye baat pooche to abid ki bekasi se koi
banaye kaise bahattar mazaar ek din may
khiza ne loot...

abhi to shaam talak hai safar sakina ka
tamache itne na bachi ko maar ek din may
khiza ne loot...

anguthi koi aba koi le gaya kurta
luti yun laashe ghareeb-ud dayaar ek din may
khiza ne loot...

jawan bete ki mayyat pe keh rahe thay hussain
mai lut gaya mere parwar-digar ek din may
khiza ne loot...

tumhare baba ke zakhmo may zakhm hai bibi
ye zakhm kaise karogi shumaar ek din may
khiza ne loot...

dile mareez ne jhele hai itne gham akhtar
qalam se hona sakenge shumaar ek din may
khiza ne loot...
Noha - Khiza Ne Loot Li
Shayar: Akhtar
Nohaqan: Mir Hassan Mir
Download Mp3
Listen Online