قافلہ جا رہا ہے وطن کے لیئے
کربلا میں قیامت کا اک شور ہے

کوئی روتی اپنے جواں لال کو
رو رہی ہے کوئی کم سُخن کے لیئے
اپنی بربادیوں کو گوارا کیا
خون میں ڈوبے گُلوں کا نظارا کیا
دے دیا فاطمہ کا بھرا گُلستاں
کربلا تیرے اُجڑے چمن کے لیئے
قافلہ جا رہا ۔۔۔۔۔

قصرِ ظالم کبھی قید خانہ کبھی
نوکِ نیزہ کبھی تعزیانہ کبھی
کون سی تھی اذیت جو دی نہ گئی
ہر جفا تھی اسیرِ محن کے لیئے
قافلہ جا رہا ۔۔۔۔۔

جب چلے تھے مدینے سے سب ساتھ تھے
عون و جعفر تھے اکبر تھے عباس تھے
جا رہی ہوں مدینے تو کوئی نہیں
اب مُصیبت فقط ہے بہن کے لیئے
قافلہ جا رہا ۔۔۔۔۔

قبرِ قاسم سے ہے یوں مُخاطب پھوپھی
تیری شادی کچھ اس طرح بن میں ہوئی
کوئی سہرے کا بھی پھول باقی نہیں
ورنہ لے جاتی قبرِ حسن کے لیئے
قافلہ جا رہا ۔۔۔۔۔

کوئی چادر نہ تھی کیسی بیداد تھی
ہاتھ ہوتے ہوئے بھی نہ آزاد تھی
کتنی مجبور کر دی گئی تھی بہن
اپنے بھائی کے دفن و کفن کے لیئے
قافلہ جا رہا ۔۔۔۔۔


khafila ja raha hai watan ke liye
karbala may qayamat ka ek shor hai

koi roti hai apne jawan laal ko
ro rahi hai koi kamsuqan ke liye
apni barbadiyon ko gawara kiya
khoon may doobe gulon ka nazara kiya
dediya fathima ka bhara gulsitan
karbala tere ujde chaman ke liye
khafila ja raha....

qasre zalim kabhi qaid khana kabhi
noke naiza kabhi taaziyana kabhi
kaunsi thi aziyat jo di na gayi
har jafa thi aseere mehan ke liye
khafila ja raha....

jab chale thay madine se sab saath thay
aun o jafar thay akbar thay abbas thay
ja rahi hoo madine to koi nahi
ab musibat faqad hai behan ke liye
khafila ja raha....

qabre qasim se hai yun muqatib phupi
teri shadi kuch is tarha ban may hui
koi sehre ka bhi bhool baakhi nahi
warna lejati qabre hassan ke liye
khafila ja raha....

koi chadar na thi kaisi bedaad thi
haath hote hue bhi na azaad thi
kitni majboor kardi gayi thi behan
apne bhai ke dafn o kafan ke liye
khafila ja raha....
Noha - Khafila Ja Raha Hai

Nohaqan: Sachey Bhai
Download Mp3
Listen Online