کہتی تھی سکینہ آئو چچا اب جان نکلنے والی ہے
اللہ رے مجھ پر جورو جفا اب جان نکلنے والی ہے

ہے شمرِ ستمگر ماہلِ شار ہے ظلم سے اُس کے شل جگر
پڑھتے ہیں تماچے صبح و شام اب جان نکلنے والی ہے

ماں پھوپھیوں کی حسرت تم سے کہوں یا اپنی مصیبت تم سے کہوں
ہر روز ہے ہم پر ظلم نیا اب جان نکلنے والی ہے

اکبر بھی ہوئے آنکھوں سے نیہا ں قاسم کا بھی کچھ پایا نہ نشاں
بابا کا بھی ملتا ہے نہ پتہ اب جان نکلنے والی ہے

دُنیا کی نگاہیں ہم سے پھری سیدانیاں سب نظروں سے گِری
کیا تم بھی ہوئے ہو ہم سے خفا اب جان نکلنے والی ہے

زندان کی وہ گرتی دیواریں رنجور دلوں کی وہ آہیں
دہشت سے جگر پھٹتا ہے میرا اب جان نکلنے والی ہے

شام آتی ہے زندان میں جس دم گھبراتا ہے دل میرا اُس دم
چلاتی ہوں کہہ کر آئو چچا اب جان نکلنے والی ہے

حیدر بس روک اپنا قلم مجلس میں ہوئی ہر چشم ہے نم
ہے جوش پہ دریا ماتم کااب جان نکلنے والی ہے


kehti thi sakina aao chacha ab jaan nikalne waali hai
allah re mujh par jo ro jafa ab jaan nikalne waali hai

hai shumre sitamgar maahile shaar hai zulm se uske chal jigar
padte hai tamazhe subho masa ab jaan nikalne waali hai

maa phupiyo ki hasrat tumse kahoo ya apni musibat tumse kahoo
har roz hai humpar zulm naya ab jaan nikalne waali hai

akbar bhi huye aankhon se niha qasim ka bhi kuch paaya na nishan
baba ka bhi milta hai na pata ab jaan nikalne waali hai

dunya ki nigaahein hum se phiri saydaniya sab nazron se giri
kya tum bhi huwe ho humse khafa ab jaan nikalne waali hai

zindan ki wo girti deewarein ranjoor dilon ki wo aahein
dehshat se jigar phat-ta hai mera ab jaan nikalne waali hai

shaam aati hai zindan may jis dam ghabrata hai dil mera us dam
chillati hoo kehkar aao chacha ab jaan nikalne waali hai

hyder bas rok apna qalam majlis may hui har chasm hai nam
hai josh pe darya matam ka ab jaan nikalne waali hai
Noha - Kehti Thi Sakina
Shayar: Hyder
Nohaqan: Mirza Sikander Ali
Download Mp3
Listen Online