کرتی تھی بین رن میں رو رو کے ہائے زینب
اے بھائی تیرا لاشہ کیسے اٹھائے زینب
کرتی تھی بین رن میں ۔۔۔

عباس ہے نہ اکبر سب قتل ہو چکے ہیں
کوئی نہیں ہے زندہ کس کو بُلائے زینب
کرتی تھی بین رن میں ۔۔۔

کیسے اُٹھائے آ کر تپتی ہوئی زمیں سے
سائے میں تیرا لاشہ کس طرح لائے زینب
کرتی تھی بین رن میں ۔۔۔

سُنتا نہیں ہے کوئی فریاد بے کسوں کی
کیا کیا ستم ہوئے ہیں کس کو بتائے زینب
کرتی تھی بین رن میں ۔۔۔

بابا کی منتظر ہے در پر کھڑی سکینہ
شِہ قتل ہو چکے ہیں کیسے بتائے زینب
کرتی تھی بین رن میں ۔۔۔

عباسِ با وفا کا لاشہ تڑپ رہا تھا
جب رن میں ظالموں نے چھینی ردائے زینب
کرتی تھی بین رن میں ۔۔۔

سر پر ردا نہیں ہے خیمے بھی جل چُکے ہین
میداں میں رو رہی ہے سر کو جھُکائے زینب
کرتی تھی بین رن میں ۔۔۔

زینب نے یوں تڑپ کر عباس کو صدا دی
تھرا رہے تھے لاشے سُن کر صدائے زینب
کرتی تھی بین رن میں ۔۔۔

عباس جلد آئو چھانے لگے اندھیرے
دشتِ بلا میں تنہا گھبرا نہ جائے زینب
کرتی تھی بین رن میں ۔۔۔

دل کیوں نہ خون روئے جاتی ہے قید ہو کر
آئی ہے کس طرح سے کیا بھول جائے زینب
کرتی تھی بین رن میں ۔۔۔

ناصر دُعا ہے میری بی بی میری قبول کر لے
گوہر جو لکھ رہا ہے نوحے برائے زینب
کرتی تھی بین رن میں ۔۔۔


karthi thi bain ran may ro ro ke haaye zainab
ay bhai tera laasha kaise uthaaye zainab
karthi thi bain ran may....

abbas hai na akbar sab khatl ho chuke hai
koi nahi hai zinda kisko bulaye zainab
karthi thi bain ran may....

kaise uthaaye aakar tapti huwi zameen se
saaye may tera laasha kis tarha laaye zainab
karthi thi bain ran may....

sunta nahi hai koi faryaad bekason ki
kya kya sitam huve hai kisko bataye zainab
karthi thi bain ran may....

baba ki muntazir hai dar par khadi sakina
sheh khatl ho chuke hai kaise bataaye zainab
karthi thi bain ran may....

abbas-e-bawafa ka laasha tadap raha tha
jab ran may zaalimo ne cheeni ridaye zainab
karthi thi bain ran may....

sar par rida nahi hai qaime bhi jal chuke hai
maidaan may ro rahi hai sar ko jhukaye zainab
karthi thi bain ran may....

zainab ne yu tadap kar abbas ko sada di
thar-ra rahe thay laashay sunkar sadaye zainab
karthi thi bain ran may....

abbas jald aao chaane lage andhere
dasht-e bala may tanha ghabra na jaaye zainab
karthi thi bain ran may....

dil kyun na khoon roye jaati hai qaid hokar
aayi hai kis tarha se kya bhool jaaye zainab
karthi thi bain ran may....

nasir dua hai meri bibi meri qabool karle
gowhar jo likh rah hai nowhe baraye zainab
karthi thi bain ran may....
Noha - Karti Thi Bain Ran May
Shayar: Gowhar
Nohaqan: Nasir Zaidi
Download Mp3
Listen Online