کربلا والوں پہ جو گذری وہ قیامت اور ہے
ہر پیمبر پر جو آئی وہ مصیبت اور ہے

عصر تک جو جانے کیا ہو پیاس کی شدت کا حال
صبح سے عاشور کے سورج کی حدت اور ہے
کربلا والوں

کٹ کے سر دارالاعمارہ پر ہے شہہ کا منتظر
کوفیوں مسلم کا انداز سفارت اور ہے
کربلا والوں

کھینچی ہے سینہ اکبر سے برچھی کی انی
آخری یہ شاہ دیں بیٹے کی خدمت اور ہے
کربلا والوں

ریگ زار گرم پر چادر بچھاتے ہیں حسین
کیا کریں کہ لاشہ قاسم کی حالت اور ہے
کربلا والوں

باب خیبر کا اٹھانا وہ شجاعت اور تھی
تیر کھا کر مسکرانا یہ شجاعت اور ہے
کربلا والوں

دشمنان کربلا پھر معرکہ آرائ ہے آج
مجلس و ماتم کی شاہد اب ضرورت اور ہے
کربلا والوں


karbala walon pa jo guzri qayamat aur hai
har payambar par jo aayi wo musibat aur hai

asr tak kya jaane kya ho pyas ki shiddat ka haal
suboh se ashoor ke suraj ki hiddat aur hai
karbala walon....

kat ke sar darul amaara par hai shah ka muntazir
koofiyo muslim ka andaze sifarat aur hai
karbala walon....

kheenchni hai seenaye akbar se barchi ki ani
aakhri ye shahe deen bete ki khidmat aur hai
karbala walon....

rayg-e-zaare garm par chadar bichaate hai hussain
kya kare ke laashaye qasim ki haalat aur hai
karbala walon....

baabe khyber ka uthaana wo shuja-at aur thi
teer khaakar muskurana ye shuja-at aur hai
karbala walon....

dushmanane karbala phir maareka aara hai aaj
majliso matam ki shahid ab zururat aur hai
karbala walon....
Noha - Karbala Walon Pe Jo
Shayar: Shahid Jafer
Nohaqan: Ali Zia Rizvi
Download Mp3
Listen Online