کربلا کربلا
تیرے عباس کے پرچم کو سلامی دیں گے

جب تلک چاند ستاروں میں چمک باقی ہے
جب تلک عرشِ سلامت پہ چمک باقی ہے
جب تلک پھول کے دامن میں مہک باقی ہے
تیرے شبیر کے ماتم کی دمک باقی ہے
کربلا کربلا
تیرے عباس کے پرچم ۔۔۔

جب تلک سینے میں دل دل مین ہے دھڑکن باقی
جب تلک اپنی یزیدوں سے ہے ان بن باقی
نورِ حق بن کے چمکتے ہوئے پن ون باقی
تا قیامت رہے شبیر کا گلشن باقی
کربلا کربلا
تیرے عباس کے پرچم ۔۔۔

کفر طاری کا یہ سیلاب رُکے گا اک دن
بارواں لال امامت کا اُٹھے گا اک دن
نام ہندہ کے گھرانے کا مٹے گا اک دن
ظالم مظلوم کی چوکھٹ پہ جھُکے گا اک دن
کربلا کربلا
تیرے عباس کے پرچم ۔۔۔

تیرے عباس کے پرچم کی قسم کھاتے ہیں
تشنہ لب شاہِ دو عالم کی قسم کھاتے ہیں
تا قیامت جو ہے اس غم کی قسم کھاتے ہیں
تیرے شبیر کے ماتم کی قسم کھاتے ہیں
کربلا کربلا
تیرے عباس کے پرچم ۔۔۔

کربلا تیرے جیالوں کی قسم کھاتے ہیں
سینوں میں ٹُوٹتے بھالوںکی قسم کھاتے ہیں
بنتِ زہرا تیرے نالوں کی قسم کھاتے ہیں
خونِ اصغر کے اُجالوں کی قسم کھاتے ہیں
کربلا کربلا
تیرے عباس کے پرچم ۔۔۔

تیرے صحرا میں لُٹا فاطمہ زہرا کا چمن
ہائے وہ قاسمِ نوشاہ کا پامال بدن
ہائے وہ شمر کا خنجر وہ آقا کی گردن
ہائے وہ یاس کے ماحول میں مجبور بہن
کربلا کربلا
تیرے عباس کے پرچم ۔۔۔

تیر سے ہوگئی جب مشکِ سکینہ چھلنی
جھُک کے غازی نے کہا شاہِ نجف ادرکنی
سینئہ اکبرِ مہرُو میں وہ نیزے کی اَنی
خُلد سے آ گئی زہرائِ رسولِ مدنی
کربلا کربلا
تیرے عباس کے پرچم ۔۔۔

حسرت و یاس کے عالم میں حزینہ بی بی
اس تصور ہی سے پھٹنے لگا سینہ بی بی
بعدِ عباس بھی کیا تھا تیرا جینا بی بی
زخمی کانون جلے کُرتے میں سکینہ بی بی
کربلا کربلا
تیرے عباس کے پرچم ۔۔۔

بھول سکتا نہیں عرفان قیامت کا سماں
بعدِ عباس زینب پہ گِرا کوہِ گِراں
ناگاہ اُٹھنے لگا شاہ کے خیموں سے دھواں
عرشِ اعظم کو ہلاتی ہوئی زینب کی فُغاں
کربلا کربلا
تیرے عباس کے پرچم ۔۔۔


karbala karbala
tere abbas ke parcham ko salaami deynge

jab talak chand sitaro may chamak baaqi hai
jab talak arshe salamat pe chamak baaqi hai
jab talak phool ke daaman may mehak baaqi hai
tere shabbir ke matam ki dhamak baaqi hai
karbala karbala
tere abbas ke parcham....

jab talak seene may dil dil may hai dhadkan baaqi
jab talak apni yazeedo se hai anban baaqi
noore haq banke chamkte huwe panwan baaqi
ta qayamat rahe shabbir ka gulshan baaqi
karbala karbala
tere abbas ke parcham....

kufr taadi ka ye sailaab rukega ek din
baarwa laal imamat ko uthega ek din
naam hinda ke ghar aane ka mitega ek din
zaalim mazloom ki chaukat pe jhukega ek din
karbala karbala
tere abbas ke parcham....

tere abbas ke parcham ki qasam khaate hai
tashnalab shaahe do aalam ki qasam khaate hai
ta qayamat jo hai is gham ki qasam khaate hai
tere shabbir ke matam ki qasam khaate hai
karbala karbala
tere abbas ke parcham....

karbala tere jiyalon ki qasam khaate hai
seeno may toot-tay bhaalo ki qasam khaate hai
binte zehra tere naalo ki qasam khaate hai
khhone asghar ke ujaalo ki qasam khaate hai
karbala karbala
tere abbas ke parcham....

tere sehra may luta fathima zehra ka chaman
haaye wo qasime nowshah ka pamaal badan
haaye wo shimr ka khanjar wo aqi ki gardan
haaye wo yaas ke mahol may majboor behan
karbala karbala
tere abbas ke parcham....

teer se hogayi jab mashke sakina jhalni
jhuk ke ghazi ne kaha shahe najaf adrikni
seenae akbare mayru me wo naize ki ani
khuld se aagaye zehra-e-rasoole madani
karbala karbala
tere abbas ke parcham....

hasrato yaas ke aalam may hazeena bibi
is tasavvur hi se phatne laga seena bibi
baade abbas bhi kya tha tera jeena bibi
zakhmi kaano jale kurte may sakina bibi
karbala karbala
tere abbas ke parcham....

bhool sakta nahi irfan qayamat ka sama
baade abbas zainab pe gira tohe gira
nagahan uthne laga shaah ke qaimo se dhuwa
arshe aazam ko hilaati huwi zainab ki fughaan
karbala karbala
tere abbas ke parcham....
Noha - Karbala Tere Abbas Ke
Shayar: Irfan
Nohaqan: Nasir Zaidi
Download Mp3
Listen Online