سکینہ مر گئی زندان میںجب یہ شور اُٹھا
الم سے زرد تھا اُس دم ہر اک کا چہرہ
قریبِ لاشئہ ہمشیر بھائی جب پہنچا
بندھے تھے ہاتھ بدن طوق سے لرزتا تھا
نہ اُٹھ سکا جو جنازہ بہن کا بھائی سے
تو رو کے بیٹے سے سجاد پھر یہ کہنے لگے

کر مدد میری باقر بیٹا ہمشیر کی قبر بنائوں میں
زنجیر اُٹھائو تم میری اور اُس کی لاش اُٹھائوں میں

دادانے بڑی مظلومی میں تھا دادی کو دفنایا
لیکن وہ مدینہ تھا باقر اور یہ ہے دیس پرایا
اس چار برس کی زہرا کو غربت میں کہاں دفنائوں میں
کر مدد میری باقر ۔۔۔

جو خوں سے بھری تھی مادر کی نظروں سے چھپادی میں نے
اک سال سے تھی جو گردن میں رسی وہ ہٹادی میں نے
گردن پہ بنے جو رسی سے کیسے وہ نیل چھپائوں میں
کر مدد میری باقر ۔۔۔

مل جائے اگر واپس مجھکو وہ تیری ردا اور گوہر
بابا کی لحد پر رکھ دوں یا صغرا کو دوں واپس جاکر
وہ دونوں امانت ہیں تیری بتلادے کسے پہنچائوں میں
کر مدد میری باقر ۔۔۔

جب تم کو رہائی مل جائے پھپھیوں کو وطن پہنچانا
رہ لیں گے یہیںغمخواری بہن تم قافلہ گھر لے جانا
دفناتے ہوئے اس بچی کو زنداں میں اگر مرجائوں میں
کر مدد میری باقر ۔۔۔

دونوں کو جدا میں کیسے کروں ہمت ہی نہیں یہ میری
ہے آپ کے سر سے لپٹی ہوئی بے جان یہ آپ کی بیٹی
کیا ساتھ سکینہ کے بابا سر آپ کا بھی دفنائوں میں
کر مدد میری باقر ۔۔۔

تاویز ِلحد کو بند کیا عابد نے یہ کہہ کر اکبر
کہنا یہ حرم سے اے باقر سب روئیں یہاں پر آکر
تربت پہ چھڑکنے کی خاطر اب پانی کہاں سے لائوں میں
کر مدد میری باقر ۔۔۔


sakina mar gayi zindan may jab ye shor utha
alam se zard tha us dam har ek ka chehra
qareebe laashaye humsheer bhai jab pahuncha
bandhe thay haath badan tauq se larazta tha
na uth saka jo janaza behan ka bhai se
to roke bete se sajjad phir ye kehne lagay

kar madad meri baqir beta humsheer ki qabr banaun mai
zanjeer uthao tum meri aur uski laash uthaun mai

dada ne badi mazloomi may tha dadi ko dafnaya
lekin wo madina tha baqir aur ye hai des paraya
is char baras ki zahra ko ghurbat may kahan dafnaun mai
kar madad meri baqir...

jo khoon se bhari thi maadar ki nazron se chupadi maine  
ek laash thi jo gardan may rassi wo hatadi maine
gardan pe banay jo rassi se kaise wo neel chupaun mai
kar madad meri baqir...

miljaye agar wapas mujhko wo teri rida aur gowhar
baba ki lehad par rakhdoo ya sughra ko doo wapas jaakar
wo dono amanat hai teri batlade kisay pahunchaun mai
kar madad meri baqir...

jab tumko rehaai miljaye phupiyon ko watan pahunchana
reh lenge yahin ghamkhwari behan tum khaafila ghar le jaana
dafnaate huye is bachi ko zindan may agar mar jaun mai
kar madad meri baqir...

dono ko juda mai kaise karoo himmat hi nahi ye meri
aap ke sar se lipti hui bejaan ye aap ki beti
kya saath sakina ke baba sar aap ka bhi dafnaun mai
kar madad meri baqir...

taweeze lehad ko hamd kiya abid ne ye kehkar akbar
kehna ye haram se ay baqir sab roye yahan par aakar
turbat pe chidakne ki khaatir ab pani kahan se laaun mai
kar madad meri baqir...
Noha - Kar Madad Meri Baqir
Shayar: Hasnain Akbar
Nohaqan: Mir Hassan Mir
Download Mp3
Listen Online