جو دل غمِ شبیر میں مغموم بہت ہیں
وہ آہ قریبِ شاہِ مظلوم بہت ہیں

بے حُبِ علی ذکر نمازوں کا نہ چھیڑو
ایسی تو نمازیں ہمیں معلوم بہت ہیں
جو دل غمِ شبیر۔۔۔

حیراں ہوں کہ اصغر کی ہنسی کیسے بیاں ہو
اُس موجِ تبسم کے تو مفہوم بہت ہیں
جو دل غمِ شبیر۔۔۔

حاصل ہے ابھی سب کو کہاں دولتِ دارین
شبیر کے غم سے ابھی محروم بہت ہیں
جو دل غمِ شبیر۔۔۔

پُر سوز ہے لیکن غمِ شبیر کی روداد
افسانے تو یوں درد کے مرقوم بہت ہیں
جو دل غمِ شبیر۔۔۔

بعدِ شاہِ مظلوم سبھی غم میں ہیں لیکن
اک بالی سکینہ ہے کہ مغموم بہت ہے
جو دل غمِ شبیر۔۔۔


jo dil ghame shabbir may maghmoom bahot hai
wo aah khareebe shahe mazloom bahot hai

be hubbe ali zikr namazon ka na chedo
aisi to namaze hamay maloom bahot hai
jo dil ghame shabbir....

hairaan hoo ke asghar ki hasi kaise bayan ho
us mauje tabassum ke to mafhoom bahot hai
jo dil ghame shabbir....

haasil hai abhi sab kahan daulat e daare
shabbir ke gham se abhi mehroom bahot hai
jo dil ghame shabbir....

pur soz hai lekin ghame shabbir ki roodaad
afsane to yun dard ke markhoom bahot hai
jo dil ghame shabbir....

baade shahe mazloom sabhi gham may hai lekin
ek bali sakina hai ke maghmoom bahot hai
jo dil ghame shabbir....
Noha - Jo Dil Ghame Shabbir

Nohaqan: Tableeq e Imamia (Nazim Hussain)
Download Mp3
Listen Online