جن کو توں سمجھی ہے اے ہند یہاں وہ تو نہیں
ہم تو آوارہ وطن قیدی ہیں اور خاک نشیں

وہ تو ہیں نورِ محمد کی ضیائ عرش مکیں
حال یہ دیکھ کہ بھی آتا نہیں تُجھ کو یقیں
توں نے کیا دیکھ کہ کیا سوچ کہ یہ بات کہی
کلمہ گو قید کریں گے بھلا اولادِ نبی
جن کو توں سمجھی ہے ۔۔۔

بولی وہ کون ہو تم لوگ مجھے یہ تو بتا
اپنا افسانہ ِ غم مجھ کو مسافر تو سُنا
روکو ان آنسوئوں کو اپنے خُدارا نہ بہا
سر کو اونچا کرو اے بیبیوصورت تو دیکھائو
بولی اک بی بی بڑا رنج ہے ماں جائی کو
تیرے شوہر نے کیا قتل میرے بھائی کو
جن کو توں سمجھی ہے ۔۔۔

کتنا پُر درد تھا یہ زینبِ مُضطر کا بیاں
سُنتے ہی ہند کی آنکھوں سے ہوئے اشک رواں
رو کے کہنے لگی با قاتلِ سُلطانِ زماں
میں چھُڑائوں گی تمہیں قید سے با عزت و شاں
نام لے کے نہ اب کیجیئو یوں شور و شین
میرے آقا میرے مولا کا بھی ہے نام حُسین
جن کو توں سمجھی ہے ۔۔۔

شب کو اک خواب وہ دیکھا ہے کہ اللہ کی پناہ
یعنی ہے تین شب و روز سے پیاسا میرا شاہ
بول کہ اپنی کنیزوں سے بصد اشک و آہ
نام اب لیتی ہوں سیدانیوں کے حقِ دوا
پاس بے حد ہے مجھے آلِ محمد کا جناب
جائو لے آئو وضو کرنے کو میرے لیئے آب
جن کو توں سمجھی ہے ۔۔۔

لب پہ عباس کبھی اکبر و اصغر تھا انیس
قاسم و عون و محمد کبھی جعفر تھا انیس
ذکرِ انصار کبھی یا شاہِ صفدر تھا انیس
تین دن شام اعزاخانہ ِ سرور تھا انیس
مجلسِ سبطِ پیعمبر ہوئی پہلی برپا
ذاکرہ جس کی تھی خود بنتِ علی و زہرا
جن کو توں سمجھی ہے ۔۔۔


jinko tu samjhi hai ay hind yahan wo to nahi
hum to awara watan qaidi hai aur khaak nasheeen

wo to hai noore mohamed ki diya arshe makeen
haal ye dekh ke bhi aata nahi tujhko yakeen
tune kya dekh ke kya soch ke ye baat kahi
kalmago qaid karenge bhala aulad e nabi
jinko tu samjhi hai....

boli wo kaun ho tum log mujhe ye to bata
apna afsana e gham mujhko mufassar to suna
roko in aansuon ko apne khudara na baha
sar ko ooncha karo ay bibiyon surat to dikhao
boli ek bibi bada ranj hai maajayi ko
tere shauhar ne kiya qatl mere bhai ko
jinko tu samjhi hai....

kitna pur dard tha ye zainab e muztar ka bayan
sunte hi hind ki aankhon se huwe ashk rawan
roke kehne lagi ba qaatile sultan e zaman
mai churaungi tumhe qaid se ba izzat o shaan
naam leke na ab kijiyo yun shor o shain
mere aaqa mere maula ka bhi hai naam hussain
jinko tu samjhi hai....

shab ko ek khaab wo dekha hai ke allah ki panaah
yani hai teen shab o roz se pyasa mera shaah
bol ke apne kaneezo se basad ashk o aah
naam ab leti hoo saydaniyo ke haq e dawa
paas behad hai mujhe aale mohamed ka janab
jao le aao wazoo karne ko mere liye aab
jinko tu samjhi hai....

lab pe abbas kabhi akbar o asghar tha anees
qasim o auno mohamed kabhi jafar tha anees
zikr e ansaar kabhi ya shahe safdar tha anees
teen din shaam azakhana e sarwar tha anees
majlise sibte payambar hui pehli barpa
zaakira jiski thi khud binte ali o zehra
jinko tu samjhi hai....
Noha - Jinko Tu Samjhi Hai
Shayar: Anees
Nohaqan: Tableeq e Imamia (Nazim Hussain)
Download Mp3
Listen Online