جن کی راہوں سے پیعمبر نے ہٹائے کانٹے

ہر قدم پر اُنہی لوگوں نے بچھائے کانٹے
جن کی راہوں سے۔۔۔۔۔

ہار پھر خار ہے فطرت ہے اذیت دینا
پہلوئے گُل سے کوئی کاش ہٹائے کانٹے
جن کی راہوں سے ۔۔۔۔۔

اہلِ گُلشن کی نگاہوں میں صدا کھٹکیں گے
لاکھ پھولوں میں رہے ہیں تو پرائے کانٹے
جن کی راہوں سے ۔۔۔۔۔

وائے ہو اُمتِ مرحومہ تیری قسمت پر
گُل کے ہوتے ہوئے دامن میں سجائے کانٹے
جن کی راہوں سے ۔۔۔۔۔

گھر جلانے کو چلے آئے نبی زادی کا
بن گئے بعدِ نبی راہ کے سارے کانٹے
جن کی راہوں سے ۔۔۔۔۔

دیکھ کر دشتِ مُصیبت میں گُلِ زہرا کو
نیزہ تانے ہوئے ہر سُو نِکل آئے کانٹے
جن کی راہوں سے ۔۔۔۔۔

تنِ شبیر ہے یوں تیروں کے گہوارے پر
میتِ گُل کو ہو جس طرح اُٹھائے کانٹے
جن کی راہوں سے ۔۔۔۔۔

رو دیئے اہلِ ستم سوکھے ہوئے ہونٹوں پر
جب زبان پھیر کے اصغر نے دِکھائے کانٹے
جن کی راہوں سے ۔۔۔۔۔


jinki raahon se payambar ne hataye kaante

har qadam par unhi logon ne bichaye kaante
jinki raahon se....

haar phir khaar hai fitrat hai aziyat dena
pehluye gul se koi kaash hataye kaante
jinki raahon se....

ahle gulshan ki nigaho may sada khatkengay
laakh phoolon may rahe hai to praye kaante
jinki raahon se....

waaye ho ummate marhooma teri qismat par
gul ke hotay huye daman may sajaye kaante
jinki raahon se....

ghar jalane ko chale haaye nabi zadi ka
bangaye baade nabi raah ke saare kaante
jinki raahon se....

dekhkar dashte musibat may gulay zehra ko
naiza taane hue har soo nikal aaye kaante
jinki raahon se....

tane shabbir hai yun teero ke gehware par
mayyate gul ko ho jis tarha uthaaye kaante
jinki raahon se....

ro diye ahle sitam sukhe huye honton par
jab zaban phayr asghar ne dikhaye kaante
jinki raahon se....
Noha - Jinki Raahon Se

Nohaqan: Sachey Bhai
Download Mp3
Listen Online