جوان ہو کر جہاں سے تم سدھارے اے علی اکبر
جئے اب ماں بیٹا کس کے سہارے علی اکبر
جوان ہو کر جہاں

بڑی امیدیں وابستہ تھی تم سے جب جواں ہو گے
پھوپھی کے مائوں بہنوں کے سہارے اے علی اکبر
جوان ہو کر جہاں

سفینہ ڈوبتا ہے ماں کا اب منجدھار میں بیٹا
لگائے کون کشتی اب کنارے اے علی اکبر
جوان ہو کر جہاں

بلائے چاند سے چہرے کی کون اک بار تو آجائو
نظر کا ماں تیرے صدقہ اتارے اے علی اکبر
جوان ہو کر جہاں

شمع روتی رہی کڑیل جواں کی دیکھ کے صورت
وہ جب ماں نے تیرے گیسو سنوارے اے علی اکبر
جوان ہو کر جہاں

لگائے آس بیٹھی ہے ادھر صغرا مدینے میں
بہن کو لینے کب جائو گے پیارے اے علی اکبر
جوان ہو کر جہاں

سکینہ کھو گئی ہے بن میں کہہ دو اس کے عمو سے
یہ دکھیا ماں کہاں جا کر پکارے اے علی اکبر
جوان ہو کر جہاں

پدر سے یوں بھی کوئی روٹھتا ہے مان بھی جائو
ضعیفی کسطرح تجھ بن گذارے اے علی اکبر
جوان ہو کر جہاں


jawan hokar jahan se tum sidhare ay ali akbar
jiye ab maa bata kiske sahare ali akbar
jawan hokar....

badi umeed-e-wabasta thi tumse jab jawan hogay
phuphi ke maaon behno ke sahare ay ali akbar
jawan hokar....

safeena doobta hai maa ka ab majhdhaar may beta
lagaye kaun kashti ab kanare ay ali akbar
jawan hokar....

balaye chand se chehre ki loon ek baar to aaja
nazar ka maa teri sadkha utaare ay ali akbar
jawan hokar....

shama roti rahi kadiyal jawan ki dekh kar surat
wo jab maa ne tere gaysu saware ay ali akbar
jawan hokar....

lagaaye aas baithi hai udhar sughra madine may
behan ko lene kab jaa-oge pyare ay ali akbar
jawan hokar....

sakina khogayi hai ban may kehdo uske ammu se
ye dukhiya maa kahan jaakar pukare ay ali akbar
jawan hokar....

pidar se yun bhi koi rooth-ta hai maan bhi jao
zaeefi kis tarha tujh bin guzaare ay ali akbar
jawan hokar....

sada anjum wo kya deta jigar tukhde badan chalni
na bole moo se wo aur maa pukare ay ali akbar
jawan hokar....
Noha - Jawan Hokar Jahan Se
Shayar: Anjum
Nohaqan: Ali Zia Rizvi
Download Mp3
Listen Online