قافلہ لُٹ گیا اماں میرا لشکر نہ رہا
اماں نانا کی نشانی علی اکبر نہ رہا
رہ گیا دردِ کمر ہائے برادر نہ رہا
اب خبر آپ نے لی گھر کی کہ جب گھر نہ رہا
اب دمِ زبح یہ پورے میرے ارماں کرنا
عرش کے نیچے نہ بالوں کو پریشاں کرنا

جائو کہ نہ اب دیرکرو ،دیکھو نہ اماں
اب لال تیرا زین پہ ہے اور نہ زمیں پر

آپ آئی ہیں اماں میں سلامی کو نہ اُٹھا
ہے درد کلیجے میں جو اُٹھنے نہیں دیتا
حسرت تھی تیرے پہلو میں دم میرا نکلتا
میں چین سے سوجاتا تیری گود میں مادر
اب لال تیرا زین پہ۔۔۔۔

کچھ دیر میں نیزے پہ رکھا ہوگا میرا سر
نہ دیکھنا اُس وقت مجھے مادرِ مضطر
چل جائے گا اُس وقت تیرے قلب پہ خنجر
گھوڑے ابھی دوڑیں گے میری لاش کہ اُپر
اب لال تیرا زین پہ۔۔۔۔

میں صبح سے تاعصر اُٹھاتارہا لاشے
دامن میں چُنے قاسمِ نو شاہ کے ٹکڑے
لپٹا علی اکبر کا کلیجہ تھا سناں سے
اماں میرے چہرے پہ ہے خونِ علی اصغر
اب لال تیرا زین پہ۔۔۔۔

کس حال میںاماں ہے تیری گود کا پالا
مقتل میں میرا کھوگیا ہر ایک اُجالا
ہے کون سکینہ کو میری پوچھنے والا
سوئے گی میرے سینے پہ کیسے میری دختر
اب لال تیرا زین پہ۔۔۔۔

دیکھو تو قیامت ہے بپا اہلِ حرم میں
خیمے سے نکل آئی ہے زینب میرے غم میں
اب آنے کو ہیں بیبیاں باہر کوئی دم میں
سمجھائو اُنہیں اماں رہیں خیمے کے اندر
اب لال تیرا زین پہ۔۔۔۔

لو سانس اُکھڑنے لگی دل ڈوب رہا ہے
نظروں میں میری زینبِ مضطر کی ردا ہے
عابد سے تھی اُمید سو وہ اب غش میں پڑا ہے
کیا ہوگا میرے بعد سکینہ کا مقدر
اب لال تیرا زین پہ۔۔۔۔

اے سرور و ریحان بیاں کیسے ہو منظر
شہہ کہتے تھے اماں یہ کڑا وقت ہے مجھ پر
کس طرح کلیجے سے لگوں آپ کے اُٹھ کر
چوموں گا قدم آپ کے اب میں لبِ کوثر
اب لال تیرا زین پہ۔۔۔۔


khafela lut gaya amma mera lashkar na raha
amma nana ki nishani ali akbar na raha
rehgaya dard e kamar haye baradar na raha
ab khabar aapne li ghar ki ke jab ghar na raha
aur ab dam e zibha ye poore mere arman karna
arsh ke neeche na baalon ko pareshan karna

jao ke na ab dayr karo, dekho na amma
ab laal tera zeen pe hai aur na zameen par

aap aayi hai amma mai salami ko na utha
hai dard kaleje may jo uthne nahi deta
hasrat thi tere pehlu mai dam mera nikalta
mai chain se sojata tere godh may madar
ab laal tera zeen pe....

kuch dayr may naize pe rakha hoga mera sar
na dekhna us waqt mujhe madar-e-muztar
chal jayega us waqt tere qalb pe khanjar
ghode abhi daudenge meri laash ke upar
ab laal tera zeen pe....

mai subh se ta asr uthata raha laashe
daman may chune qasim e naushah ke tukde
lipta ali akbar ka kaleja tha sina se
amma mere chehre pe hai khoon e ali asghar
ab laal tera zeen pe....

kis haal may amma hai teri godh ka paala
maqtal may mera khogaya har ek ujaala
hai kaun sakina ko meri poochne wala
soyegi mere seene pe kaise meri dukhtar
ab laal tera zeen pe....

dekho to qayamt hai bapa ahl e haram may
qaime se nikal aayi hai zainab mere gham may
ab aane ko hai bibiyan bahar koi dam may
samjhao unhe amma rahe qaime ke andar
ab laal tera zeen pe....

lo saans ukharne lagi dil doob raha hai
nazron may meri zainab e muztar ki rida hai
abid se thi umeed so wo ghash may pada hai
kya hoga mere baad sakina ka muqaddar
ab laal tera zeen pe....

ay sarwar o rehaan bayan kaise ho manzar
sheh kehte thay amma ye kada waqt hai mujhpar
kis tarha kaleje se lagoo aap ke uth kar
chumoonga qadam aap ke ab mai lab e kausar
ab laal tera zeen pe....
Noha - Jao Ke Na Ab Dayr
Shayar: Rehaan Azmi
Nohaqan: Nadeem Sarwar
Download Mp3
Listen Online