جائو اب خدا حافظ اے میرے علی اکبر

سر زمینِ کربلا پر درد کا عجب منظر
جا رہا ہے مقتل کو اب شبیہہِ پیعمبر
الوداع کرنے کو لاکے موت کے در پر
اپنے دل کے ٹکڑے سے کہہ رہی ہے یہ مادر
جائو اب خدا حافظ ۔۔۔۔۔

آ میں اپنے ہاتھوں سے پھر سنواروں زُلفیں
پاس بیٹھ جا کر لوں تجھ سے دو گھڑی باتیں
دیکھنے کو ترسیں گی تجھ کو اب میری آنکھیں
میرے لال آ تجھ کو دیکھ لوں میں جی بھر کر
جائو اب خدا حافظ ۔۔۔۔۔

ماں نے تجھ کو پالا تھا کتنی آرزوئوں سے
کیا بتائوں میں بیٹا دل میں کتنے ارماں تھے
اب نہ دیکھ پائوں گی پھول تیرے سہرے کے
قلب ٹکڑے ہوتا ہے کس طرح کہے مادر
جائو اب خدا حافظ ۔۔۔۔۔

ہر قدم پہ ہوئے گا سامنا اندھیروں کا
اب چراغ بجھتا ہے زندگی کی راہوں کا
نور لے کے جاتے ہو تم ہماری آنکھوں کا
تم کو ڈھونڈنے نکلیں کس کا آسرا لے کر
جائو اب خدا حافظ ۔۔۔۔۔

دھوپ کی تمازت ہے ہے تین دن کے پیاسے ہو
تم پہ صدقے ہو جائوں دو گھڑی ٹھہر جائو
ماں کو چھوڑ کر بیٹا جا رہے ہو مقتل کو
ہائے تم سے پہلے ہی کیوں نہ مر گئی مادر
جائو اب خدا حافظ ۔۔۔۔۔

رُخصتِ علی اکبر کے عجیب لمحے تھے
یوں رشید خیمے سے اکبرِ جواں نکلے
اک جنازہ نکلا ہو جس طرح بھرے گھر سے
کہہ رہی ہے رو رو کر مادرِ علی اکبر
جائو اب خدا حافظ ۔۔۔۔۔


jao ab khuda hafiz ay mere ali akbar

sar zameene karbal par dard ka ajab manzar
jaa raha hai maqtal ko ab shabihe payghambar
alwida karne ko laake maut ke dar par
apne dil ke tukde se keh rahi hai ye madar
jao ab khuda hafiz....

aa mai apne haaton se phir sawaardu zulfein
paas baith ja kar loon tujh se do ghadi baatein
dekhne ko tarsegi tujko ab meri aankhein
mere laal aa tujhko dekhlun mai jee bharkar
jao ab khuda hafiz....

maa ne tujhko paala tha kitni aarzuon se
kya bataun mai beta dil may kitne armaan thay
ab na dekh paungi phool tere sehre ke
qalb tukde hota hai kis tarha kahe madar
jao ab khuda hafiz....

har qadam pa howega saamna andhero ka
ab charagh bujhta hai zindagi ki raaho ka
noor leke jaate ho tum hamari aankhon ka
tumko dhoondne nikle kiska aasra lekar
jao ab khuda hafiz....

dhoop ki tamadat hai teen din ke pyase ho
tum pe sadke hojaaun do ghadi teher jao
maa ko chod kar beta jaa rahe ho maqtal ko
haaye tumse pehle hi kyon na margayi madar
jao ab khuda hafiz....

rukhsate ali akbar ke ajeeb lamhein thay
yun rasheed qaime se akbare jawaan nikle
ek janaza nikla ho jis tarha bhare ghar se
keh rahi ro ro kar madare ali akbar
jao ab khuda hafiz....
Noha - Jao Ab Khuda Hafiz
Shayar: Rasheed Shaheedi
Nohaqan: Hadi Ali Khan Muslim
Download Mp3
Listen Online