جلتے ہوئے خیموں میں صدا گونج رہی ہے
عباس عباس عباس اب آئو

یہ لشکر بے دین ردا چھین رہا ہے
سیدائیوں پہ شمر کی دروں سے جفا ہے
عباس عباس عباس بچائو

نہ محرموں کا مجمع ہے اور ہم ہیں کھلے سر
گھیرے ہوئے ہیں دشمن دیں اور ستمگر
عباس عباس عباس ہٹائو

ظالم ہمیں لاچار سمجھتے ہیں برادر
نیزوں کی چھبوتے ہیں انی پشت پہ آکر
عباس عباس عباس بچائو

دُر باکلی سکینہ کے ستم گر نے اتارے
رخسار پہ ہے بے جرم طمانچے بھی ہیں مارے
عباس عباس عباس بلائو

ضد کرتی ہے سوتی نہیں روتی ہے سکینہ
آغوش تمہاری ہے نہ ہے باپ کا سینہ
عباس عباس عباس بلائو

اعدائ نے جلا ڈالا بیاباں میں مسکن
جلتا ہے سکینہ کا تیری آگ سے دامن
عباس عباس عباس بجھائو

اے کاش انیس اتنا ہی بن جائے مقدر
دیکھوں فریح شاہ ابرار میں جا کر
عباس عباس عباس بلائو


jaltay hue qaimo may sada gounj rahi hai
abbas abbas abbas ab aao

ye lashkar e bay deen rida cheen raha hai
saidaniyo pay shimr ki durra say jafa hai
abbas abbas abbas bachao

na mehramo ka majma hai aur ham hain khulay sar
gheyre huey hain dushman e deen' aur sitamgar
abbas abbas abbas hatao

zaalim hamay lachaar samjhtay hain baradar
nayzo ki chubotay hai ani pusht pay aaker
abbas abbas abbas bachao

dur baali sakina ke sitamgar nay utaray
rukhsaar pay bejurm tamachay bhi hai maaray
abbas abbas abbas bulao

zid karti hai soti nahi roti hai sakina
aagosh tumhari hai na hai baap ka seena
abbas abbas abbas bulao

aada ne jala dala bayaban main maskan
jalta hai sakina ka teri aag say daaman
abbas abbas abbas bujhao

ay kaash anees itna hi ban jaye muqaddar
dekhun zareeh e shah e abrar ka ja kar
abbas abbas abbas bulao
Noha - Jalte Huve Qaimo
Shayar: Anees Pehersari
Nohaqan: Ali Zia Rizvi
Download Mp3
Listen Online