اے دُخترِ شیرِ خُدا جو کربلا میں ہے بے ردا
جلتے ہوئے خیمے ہیں نہ بھائی نہ ردا ہے
اُمت سے ملا کیسا یہ زینب کو صلہ ہے

ٓٓآلِ عبا کے سر ہیں چڑھے نوکِ سِناں پر
لاشے پڑے ہیں ہر سُو جو سب رگِ تپاںپر
پہناتی اُنھیں بن میںکفن خاکِ شفائ ہے
جلتے ہوئے خیمے ہیں ۔۔۔۔۔

عابد کو لا رہی ہے وہ کاندھوں پہ اُٹھا کر
اور شمر کو کہتی ہے ذرا خوفِ خُدا کر
کوئی نہ رہا اک یہ ہی بیمار بچا ہے
جلتے ہوئے خیمے ہیں ۔۔۔۔۔

کرتے ہیں سب فرشتے شبیر کا ماتم
کرتی ہیں حور و غلمہ بے شیر کا ماتم
ماتم شہِ بے کس کا سرِ عرش بپا ہے
جلتے ہوئے خیمے ہیں ۔۔۔۔۔

اس بات کی اے شامِ غریباں ہے گواہ تُو
تارے نہیں یہ ثانیئے زہرا کے ہیں آنسو
خورشید نہیں آج تو خود روتا خُدا ہے
جلتے ہوئے خیمے ہیں ۔۔۔۔۔


ay dukhtare shere khuda jo karbala may hai berida
jalte hue qaime hai na bhai na rida hai
ummat se mila kaisa ye zainab ko sila hai

naale aba ke sar hai chade nouke sina par
laashe pade hai har soo jo sab raythe safa par
pehnati unhe bazme kafan khaake shafa hai
jalte hue qaime hai....

abid ko laa rahi hai wo kaandho pe utha kar
aur shimr ko kehti hai zara khaufe khuda kar
koi na raha ek yehi bemaar bacha hai
jalte hue qaime hai....

karte hai sab farishte shabbir ka matam
karti hi hoor o malma baysheer ka matam
matam shahe bekas ka sare arsh bapa hai
jalte hue qaime hai....

is baat ki ay shame gharibaan hai gawa tu
taare nahi ye saaniye zehra ke hai aansu
khursheed nahi aaj to khud rota khuda hai
jalte hue qaime hai....
Noha - Jalte Huve Qaime Hai

Nohaqan: Hasan Sadiq
Download Mp3
Listen Online