تعظیم کرو آتی ہے شہزادیئے شام
اے اسیرانِ ستم اُٹھو کرو آئو سلام
ہند آتی ہے ہر اک دُکھ کی دوا کر دے گی
رحم دل بی بی ہے چاہے تو رہاکر دے گی

جب سُنی ہند کے آنے کی خبر زینب نے
رکھ دیا خاک پہ روتے ہوئے سر زینب نے

بولی سجاد سے جلدی کوئی چادر لا دے
میرے حصے جہاں موت ہے جا کر لا دے
کوئی شے چھُپنے کی مجھ کو میرے دلبر لا دے
کہہ کے یہ تھام لیا اپنا جگر زینب نے
جب سُنی ہند کے ۔۔۔۔۔

سامنا ہند کا کس طرح کروں گی بیٹا
آنکھ بھر کر مجھے جس نے نہ کبھی دیکھا
اب وہ دیکھے گی یہاں ہائے کھُلا سر میرا
یہ وہ ہے جس کو دیئے لال و گوہر زینب نے
جب سُنی ہند کے ۔۔۔۔۔

ہند آئی تو کسی نے کہا تعظیم کرو
قیدیو جائے ادب ہے چلو تسلیم کرو
رحم دل بی بی ہے گھبرائو نہ ﴿تکنیم﴾ کرو
سُن کے یہ اشکوں سے دامن کیا تر زینب نے
جب سُنی ہند کے ۔۔۔۔۔

ہند نے نام جو پوچھا تو حیا آنے لگی
بنتِ زہرا تھی تڑپنے لگی شرمانے لگی
یاد عباس کی بی بی کو بہت آنے لگی
کی سرِ شاہ پہ اُس وقت نظر زینب نے
جب سُنی ہند کے ۔۔۔۔۔

ہند پہچان گئی جسم میں لرزا آیا
پھینک کر اپنی ردا روئی بہت غش آیا
سر رکھا قدموں میں روتے ہوئے یہ فرمایا
کیسی حالت میں کیا یاں کا سفر زینب نے
جب سُنی ہند کے ۔۔۔۔۔

کیسے ریحان بیاں ہو گا قید کا منظر
ہند کے سر پہ جو زینب نے اُڑھائی چادر
اور اُس وقت بھی بی بی کا برہنہ رہا سر
غم کا ماحول ملا دیکھا جدھر زینب نے
جب سُنی ہند کے ۔۔۔۔۔


tazeem karo aati hai shehzadi e sham
ay aseeran e sitam utho karo aao salam
hind aati hai har ek dukh ki daqa kardegi
rehm dil bibi hai chahe to reha kardegi

jab suni hind ke aane ki khabar zainab ne
rakh diya khaak pe rotay hue sar zainab ne

boli sajjad se jaldi koi chadar la de
mere hissay jahan maut hai jakar la de
koi shay chupne mujhko mere dilbar la de
kehke ye thaam liya apna jigar zainab ne
jab suni hind ke....

saamna hind ka kis tarha karoongi beta
aankh bhar kar mujhe jis ne na kabhi dekha
ab wo dekhegi yahan haye khula sar mera
ye wo hai jisko diye laal o gohar zainab ne
jab suni hind ke....

hind aayi to kisi ne kaha tazeem karo
qadiyon jaye adab hai chalo tasleem karo
rehm dil bibi hai ghabrao na [takneem] karo
sunke ye ashkon se daman kiya tar zainab ne
jab suni hind ke....

hind ne naam jo poocha to haya aane lagi
binte zehra thi tadapne lagi sharmane lagi
yaad abbas ki bibi ko bahot aane lagi
ki sar e shaah pe us waqt nazar zainab ne
jab suni hind ke....

hind pehchan gayi jism may larza aaya
phaynk kar apni rida royi bahot ghash aaya
sar rakha qadmo rote hue ye farmaya
kaisi haalat may kiya yan ka safar zainab ne
jab suni hind ke....

kaise rehan bayan qaid ka hoga manzar
hind ke sar pe jo zainab ne udaayi chadar
aur us waqt bhi bibi ka barehna raha sar
gham ka mahol mila dekha jidhar zainab ne
jab suni hind ke....
Noha - Jab Suni Hind Ke
Shayar: Rehaan Azmi
Nohaqan: Syed Raza Abbas Zaidi
Download mp3
Listen Online