جب قید ہوئی شام کے زنداں میں سکینہ
کہتی تھی یہ رو کر میرے بابا میرے بابا

لو جلد خبر آن کہ دم گُھٹتا ہے میرا
اس شام کے زنداں میں بلا کا ہے اندھیرا
مر جائے نہ اس عالمِ غُربت میں سکینہ
جب قید ہوئی ۔۔۔

یہ حال سکینہ کا ہوا ظلم و ستم سے
کانوں سے لہو بہتا ہے رُخسار ہیں نیلے
مر جائے نہ اس عالمِ غُربت میں سکینہ
جب قید ہوئی ۔۔۔

اس درجہ اندھیرا ہے کوئی شمع جلا دے
جا کر کوئی عباسِ دلاور کو بُلا دے
مر جائے نہ اس عالمِ غُربت میں سکینہ
جب قید ہوئی ۔۔۔

کیوں گھُرکیاں دیتے ہیں مجھے آن کے اعدا
کچھ دیر کو آ جائیے وارے میرے بابا
مر جائے نہ اس عالمِ غُربت میں سکینہ
جب قید ہوئی ۔۔۔

اس درجہ ستم گروں نے بچی کو ستایا
اُس شام کے زندان میں دم گُھٹ گیا اُس کا
اب خاک پہ زندان میں سوتی ہے سکینہ
جب قید ہوئی ۔۔۔

یوں سیدِ سجاد کا دل کانپ رہا ہے
لاشہ جو سکینہ کا اندھیرے میں رکھا ہے
اب خاک پہ زندان میں سوتی ہے سکینہ
جب قید ہوئی ۔۔۔

میں کیسے کہوں غم سے جگر پھٹتا ہے میرا
کُرتا جو بدن پہ تھا وہ ہی اُس کا کفن تھا
اب خاک پہ زندان میں سوتی ہے سکینہ
جب قید ہوئی ۔۔۔

کچھ بھی نہ میسر تھا وہاں غُسل و کفن کو
کُرتے میں ہی دفنا دیا بھائی نے بہن کو
اب خاک پہ زندان میں سوتی ہے سکینہ
جب قید ہوئی ۔۔۔

اشرفجب اہلِ حرم ہیں لوٹ کے آ گئے
سجاد بصد آہ و فغاںکہتے تھے اشرف
اب خاک پہ زندان میں سوتی ہے سکینہ
جب قید ہوئی ۔۔۔


jab qaid hui shaam ke zindan may sakina
kehti thi ye rokar mere baba mere baba

lo jald khabar aan ke dum ghut-ta hai mera
is shaam ke zindan may bala ka hai andhera
mar jaye na is aalame ghurbat may sakina
jab qaid hui....

ye haal sakina ka huwa zulm o sitam se
kano se lahoo behta hai ruksaar hai neele
mar jaye na is aalame ghurbat may sakina
jab qaid hui....

is darja andhera hai koi shamma jalade
jaakar koi abbas e dilawar ko bulaade
mar jaye na is aalame ghurbat may sakina
jab qaid hui....

kyun ghurkiyan dete hai mujhe aan ke aada
kuch dayr ko aajaiye waare mere baba
mar jaye na is aalame ghurbat may sakina
jab qaid hui....

is darja sitamgaron ne bachi ko sataya
us sham ke zindan may dam ghutgaya uska
ab khaak pe zindan may soti hai sakina
jab qaid hui....

yun sayyede sajjad ka dil kaamp raha hai
laasha jo sakina ka andhere may rakha hai
ab khaak pe zindan may soti hai sakina
jab qaid hui....

mai kaise kahoo gham se jigar phat ta hai mere
kurta jo badan pe tha wohi uska kafan tha
ab khaak pe zindan may soti hai sakina
jab qaid hui....

kuch bhi na mayassar tha wahan ghusl o kafan ko
kurte may hi dafna diya bhai ne behen ko
ab khaak pe zindan may soti hai sakina
jab qaid hui....

jab ahle haram laut ke hai aagaye ashraf
sajjad basad aaho fughan kehte thay ashraf
ab khaak pe zindan may soti hai sakina
jab qaid hui....
Noha - Jab Qaid Hui Zindan
Shayar: Ashraf
Nohaqan: Tableeq e Imamia (Nazim Hussain)
Download Mp3
Listen Online