جب حکمِ رہائی ملا زنداں سے حرم کو
اک گھر بھی میسر ہوا ترسیدئہ غم کو
اُس گھر پہ لگایا اک سیاہ علم کو
زینب نے کہا رونا ہے دل کھول کے ہم کو
پھر فرشِ عزائ مل کے اسیروں نے بچھایا
اور شام کے گھر گھر سے پئے پُرسہ و گریہ
اک غول عزادار خواتین کا آیا
پھر مجلسِ اوّل کا یوں آغاز ہوا تھا
اُس مجلسِ اوّل کی جو اوّل تھی خطیبہ
گھر بھر کی عزادار وہی زینبِ کبریٰ
خطبہ پڑاآغاز کیا مجلسِ غم کا
ہائے خطبہ ابھی جاری تھا اک شور سا اُٹھا
کہ سر آتے ہیں مجلس میںشہیدانِ ستم کے
اے بیبیوں ماتم کرو حلقِ میں حرم کے

ہائے ہم لُٹ گئے
ہائے برباد ہوئے
ہائے قیدی بنے
ہائے در در پھرے
ہائے ماتم کرو

ہائے پہلے وہاں انصارِ حسینی کے سر آئے
حُر جون حبیب ابنِ مظاہر کے سر آئے
وہبِ قلبی عوسجہ تشنہ جگر آئے
ماتم ہوا اُس پہلے عزاخانے میں ایسے
شہزادیاں روتیں ہوں سگے بھائی کو جیسے
ہائے ہم لُٹ گئے ۔۔۔۔

ہائے اک چاند سا سر دیکھا جو خون میں تر ہے
سب کہنے لگے یہ کسی نوشاہ کا سر ہے
فروا نے کہا ہاں یہ میرا لختِ جگر ہے
ارے قاسم مجھے سہرا بھی دیکھانے نہیں آئے
ارے زندان سے اماں کو چھڑانے نہیں آئے
ہائے ہم لُٹ گئے ۔۔۔۔

ہائے دو چھوٹے سے سر گود میں سجاد جو لائے
زینب نے کہا عون و محمد میرے آئے
ارے قربان گئی کوئی میری گود میں لائے
روئی نہیں ماتم نہ کیا پیار تو کر لوں
اے بھائی اجازت ہے انہیں آج تو رولوں
ہائے ہم لُٹ گئے ۔۔۔۔

ہائے جیسے ہی عزاخانے میں اکبر کا سر آیا
زینب نے سرِ عون ومحمد کو ہٹایا
آغوش سے بھابی کی سر اکبر کا اُٹھایا
ارے چلّائی میرے لال ذرا آنکھیں تو کھولو
ارے صغرا کے لئے ہے کوئی پیغام تو بولو
ہائے ہم لُٹ گئے ۔۔۔۔

ہائے اک چھوٹے سے سید کا جو سر سامنے آیا
منہ اشکوں سے ماں نے علی اصغر کا دھلایا
ہر بی بی نے اُس سرکوکلیجے سے لگایا
ارے رو رو کے سکینہ کو صدا دیتی تھی مادر
ارے آجائو تمہیں ڈھونڈریا ہے علی اصغر
ہائے ہم لُٹ گئے ۔۔۔۔

ہائے سر آیا وہاں جب بنی ہاشم کے قمر کا
روتے ہوئے ہر بی بی نے دکھڑا یہ سنایا
اے ضامنِ چادر تُو بہت دیر میں آیا
یہ دیکھ کے ہر بی بی کا صدچاک جگر تھا
کہ پہلو میں علم کے ہی علمدار کا سر تھا
ہائے ہم لُٹ گئے ۔۔۔۔

ہائے سر مجلسِ شبیر میں شبیر کا آیا
ہر بی بی کے لب پہ تھی صدا ہائے حسینا
ماتم کی صدائوں میں یہ زینب نے سُنایا
کہ اے میرے اخی دیکھ تیری فرشِ عزائ ہے
ماتم تیرا اس مجلسِ اوّل میں بپا ہے
ہائے ہم لُٹ گئے ۔۔۔۔

ہائے لُوٹے ہوئے اسباب میں جو چیز یںملی تھیں
سادات سے یہ شامِ غریباں میں چھنی تھیں
تر خون میں دو بالیاں بھی اُن میں رکھی تھیں
اے سرور و ریحان عزاداریئِ شہہ کا
تھا پہلا عزاخانہ سروںسے جو سجا تھا
ہائے ہم لُٹ گئے ۔۔۔۔


jab hukme rihaai mila zindan se haram ko
ek ghar bhi mayassar hua tarseeda e gham ko
us ghar pe lagaya gaya ek syah alam ko
zainab ne kaha rona hai dil khol ke hum ko
phir farshe aza milke aseeron ne bichaya
aur sham ke ghar ghar se paye pursa o girya
ek ghaul azadaar khawateen ka aaya
phir majlise awwal ka yun aaghaaz hua tha
us majlise awwal ki jo awwal thi khateeba
ghar bhar ki azadaar wohi zainab e kubra
khutba padha aaghaaz kiya majlise gham ka
haye khutba abhi jari tha ke ek shor sa utha
ke sar aate hai majlis may shaheedan e sitam ke
ay bibiyon matam karo halqe may haram ke

haye hum lut gaye
haye barbaad huye
haye qaidi bane
haye dar dar phire
haye matam karo

haye pehle wahan ansare hussaini ke sar aaye
hur jaun habeeb ibne mazahir ke sar aaye
wehab e kalbi ausaja tashna jigar aaye
matam hua us pehle azakhane may aise
shehzadiyan roti ho sagay bhai ko jaise
haye hum lut gaye....

haye ek chand sa sar dekha ke jo khoon may tar hai
sab kehne lage ye kisi naushah ka sar hai
farwa ne kaha haan ye mera lakhte jigar hai
arey qasim mujhe sehra bhi dikhane nahi aaye
arey zindan se amma ko chudhane nahi aaye
haye hum lut gaye....

haye do chote se sar godh may sajjad jo laaye
zainab ne kaha aun o mohamed mere aaye
arey qurban gayi koi meri godh may laaye
royi nahi matam na kiya pyar to karloo
ay bhai ijazat hai inhe aaj to roloon
haye hum lut gaye....

haye jaise hi azakhane may akbar ka sar aaya
zainab ne sare aun o mohamed ko hataya
aaghosh se bhabhi ki sar akbar ka uthaya
arey chillayi mere laal zara aankhein to kholo
arey sughra ke liye hai koi paigham to bolo
haye hum lut gaye....

haye ek chote se sayyed ka jo sar saamne jo aaya
moo ashkon se maa ne ali asghar ka dhulaaya
har bibi ne us sar ko kaleje se lagaya
arey ro ro ke sakina ko sada deti thi madar
arey aajao tumhein dhoond raha hai ali asghar
haye hum lut gaye....

haye sar aaya wahan jab bani hashim ke qamar ka
rote hue har bibi ne dukhda ye sunaya
ay zaamine chadar tu bahot dayr may aaaya
ye dekh ke har bibi ka sad chaak jigar tha
ke pehlu may alam ke hi alamdar ka sar tha
haye hum lut gaye....

haye sar majlis e shabbir may shabbir ka aaya
har bibi ke lab pe thi sada haye hussaina
matam ki sadaon may ye zainab ne sunaya
ke ay mere aqi dekh teri farshe aza hai
matam tera is majlise awwal may bapa hai
haye hum lut gaye....

haye loote hue asbab may jo cheeze mili thi
sadaat se ye shame ghariban may chini thi
tar khoon may do baliyan bhi unmay rakhi thi
ay sarwar o rehan azadariye sheh ka
tha pehla azakhana saron se jo saja tha
haye hum lut gaye....
Noha - Jab Hukme Rehai Mila
Shayar: Rehaan Azmi
Nohaqan: Nadeem Sarwar
Download Mp3
Listen Online