جب علم سے کوئی مشکیزہ بندھا ہوتا ہے
کسی بے درد کا اظہار وفا ہوتا ہے

کیسے رہوار سے گرتا ہے کوئی
بے بازو گرز کا زخم بھی جب سر پہ لگا ہوتا ہے
جب علم سے کوئی

اس کو للہ نہ کھولو کہ ہے پامال بدن
ایسا لاشہ کہیں چادر میں کھلا ہوتا ہے
جب علم سے کوئی

شاہ دین صرف علم خیمے میں لائیں ہوں گے
یہ جو اک شور قیامت کا بپا ہوتا ہے
جب علم سے کوئی

خون برستا ہے فضائوں سے لرزتی ہے زمین
کند خنجر سے جو سر شہہ کا جدا ہوتا ہے
جب علم سے کوئی

ہائے سجاد کے پیروں میں زنجیر گرم
آبلوں کے لئے ہر کانٹہ لگا ہوتا ہے
جب علم سے کوئی

مشک دکھلا کہ بہاتا ہے زمین پر پانی
روز اک ظلم سکینہ پہ نیا ہوتا ہے
جب علم سے کوئی

اک آواز حرم سنتے ہیں ہر شب شہید
وقت زنداں کوئی نوحہ صدا ہوتا ہے
جب علم سے کوئی


jab alam se koi mashkeeza bandha hota hai
kisi bedard ka izhare wafa hota hai

kaise rehwar se girta hai koi be-baazu
gurz ka zakhm bhi jab sar pe laga hota hai
jab alam se koi....

isko lilaah na kholo ke hai pamaal badan
aisa laasha kahin chadar may khula hota hai
jab alam se koi....

shahe deen sirf alam khaimay may laaye hongay
ye jo ek shor qayamat ka bapa hota hai
jab alam se koi....

khoon barasta hai fiza-on se larazti hai zameen
kundh khanjar se jo sar sheh ka juda hota hai
jab alam se koi....

haye sajjad ke pairon may wo zanjeer-e-garan
aabilon ke liye har kaanta laga hota hai
jab alam se koi....

mashk dikhlake bahate hai zameen par pani
roz ek zulm sakina pe naya hota hai
jab alam se koi....

ek awaaz haram sunte hai har shab shahid
waqt e zindan koi noha sada hota hai
jab alam se koi....
Noha - Jab Alam Se Koi
Shayar: Shahid Jafer
Nohaqan: Ali Yazdan
Download mp3
Listen Online