عطرت اطہر کے غم خوار اشاب حسین
لشکر عباس کے جرار اشاب حسین

جب چراغاں خیمہ شاہ شہیداں گل ہوا
کیا حبیب ابن مظاہر کیا ظہیر وا وساجہ
جوش نصرت میں ہر اک چہرہ منور ہو گیا
کربلا میں ہے فلک عصر اشاب حسین
عطرت اطہر کے غم خوار اشاب حسین

رات بھر مہوے تلایا ہے حرم کے پاسباں
ہر قدم پر نعرہ تکبیر ہے ورد زبان
مشورے باہم یہی کہ کس کی جائے پہلے جان
ہے شب عاشور سے تیار اشاب حسین
عطرت اطہر کے غم خوار اشاب حسین

کوششیں یہ ہیں کہ حملہ ہو تو آگے ہم بڑھے
تیغ کے جوہر دکھائے سب سے پہلے ہم لڑیں
لشکر ادا کی نظریں بھی نہ خیموں پر پڑے
عزم میں ہے آہن دیوار اشاب حسین
عطرت اطہر کے غم خوار اشاب حسین

ہر اذان صبح پر آئے ہر اول ہو گئے
خون کی سرخی سے اپنی سب خطائیں دھو گئے
مل گیا رومال زہرہ نیند آئی سو گئے
دشت غربت میں بھی ہے معیار اشاب حسین
عطرت اطہر کے غم خوار اشاب حسین

روک لیں گے اپنے سینوں پر ہر اک ضرب لعین
آپ پڑھئے گا نماز اے سرور دنیا و دین
ہم نماز ظہر پڑھ لیں گے سرِ خلد بریں
کہہ رہی ہے یہ بصد اسرار اشاب حسین
عطرت اطہر کے غم خوار اشاب حسین

وقت نزاع جوں کا سر اپنے زانوں پر رکھا
مرتبہ اک یہ بھی آقا نے غلاموں کو دیا
آگئی خوشبو لہو میں جسم روشن ہو گیا
موت سے ہیں کس قدر سرشار اشاب حسین
عطرت اطہر کے غم خوار اشاب حسین

خیمہ شبیر میں اب بے زبان کوئی نہیں
قبر اصغر دھوپ میں ہے سایہ بھی کوئی نہیں
شاہ دین مقتل میں ہے اور مہرباں کوئی نہیں
کاش جی اٹھے فقط اک بار اشاب حسین
عطرت اطہر کے غم خوار اشاب حسین

بریدہ ہیں بیبیاں شہید سر بازار شام
رک نہ جائے شدت غم سے کہیں نبض امام
پیش ہوں گے سب حرم اب بار سر دربار عام
اور ادھر مقتل میں ہے لرزاں اشاب حسین
عطرت اطہر کے غم خوار اشاب حسین


itrat-e-athaar ke ghamkhwar ashaab-e-hussain
lashkar-e-abbas ke jarrar ashaab-e-hussain

jab charag-e-qaima-e-shah-e-shaheeda gul hua
kya habeeb ibn-e-mazahir kya zaheer-o-ausaja
josh-e-nusrat may har ek chehra munawwar hogaya
karbala may hain falak aasar ashaab-e-hussain
itrat-e-athaar....

raat bhar mehve talaya hai haram ke pasba
har qadam par nara-e-takbir hai vird-e-zabaan
mashvaray baham yehi ke kis ki jaaye pehley jaan
hai shab-e-aashur se taiyyar ashaab-e-hussain
itrat-e-athaar....

koshishay ye hai ke hamla ho to aagay hum berhain
taygh ke johar dikhaye sab se pehle hum laday
lashkar-e-aada ki nazray bhi na qaimo par paday
azm may hai aahani devar ashaab-e-hussain
itrat-e-athaar....

hur azaan-e-subh par aaye haraval hogaye
khoon ki surkhi se apni sab khatayein dho gaye
mil gaya rumaal-e-zehra neend aayi sogaye
dasht-e-ghurbat may bhi hai meyar ashaab-e-hussain
itrat-e-athaar....

rok laynge apne seeno par har ek zarb e laayein
aap padhiyega namaz ay sarwar-e-duniya o deen
ham namaz-e-zuhr padh lainge sar e khuld e bareen
keh rahe hai ye basad israr ashaab-e-hussain
itrat-e-athaar....

waqt-e-naza john ka sar apne zanu par rakha
martaba ek ye bhi aaqa ne ghulamo ko diya
aagayi khushbu lahoo may jism raushan hogaya
maut se hai kis qadar sarshaar ashaab-e-hussain
itrat-e-athar ke ghamkhwar ashaab-e-hussain
itrat-e-athaar....

qaima-e-shabbir may ab be-zaban koi nahi
qabr-e-asghar dhoop may hai saayeba koi nahi
shah-e-deen maqtal may hain aur meherba koi nahi
kash ji utthay faqt ek bar ashaab-e-hussain
itrat-e-athaar....

berida hai bibiya shahid sar-e-bazaar-e-shaam
ruk na jaye shiddat-e-gham se kahin nabz-e-imam
peysh hongay sab haram ab bar sar-e-darbar-e-aam
aur udhar maqtal may hain lazhaarashaab-e-hussain
itrat-e-athaar....
Noha - Itrat e Athaar
Shayar: Shahid Jafer
Nohaqan: Ali Yazdan
Download mp3
Listen Online