اُجڑ گیا ہے بتول کا گھر حسین چپ ہیں
خدا کی مرضی میں سر جھکا کر حسین چپ ہیں
یا غریب یاحسین

یہ صبر کی کون سی ہے منزل
پسر کا برچھی سے چھد گیا دل
وہ ہنس رہاہے سرہانے قاتل
اُٹھائے ہاتھوں پہ لاشِ اکبر،حسین چپ ہیں
اُجڑ گیا ہے۔۔۔

گیا ہے لاکھوں میں وہ اکیلا
چلائے جاتے ہیں تیر اعدا
کہیںسے برچھی کہیں سے بھالا
برس رہے ہیں کہیں سے پتھر،حسین چپ ہیں
اُجڑ گیا ہے۔۔۔

لگا ہے کیوں میرے دل کو دھڑکا
لہوسے کس کے یہ تر ہے چہرا
کہاںہے اصغربتائیں مولا
سوال اصغر کی ماں کا سن کر، حسین چپ ہیں
اُجڑ گیا ہے۔۔۔

نصیب ِراہب جو شہ نے بدلا
یہاں پہ خاموش کبریا تھا
مگر یہ منظر ہے کربلا کا
یہاں پہ دے کر خدا کو اکبر ،حسین چپ ہیں
اُجڑ گیا ہے۔۔۔

کہا یہ قاصد نے رو کے مولا
مریض بیٹی کا خط ہوں لایا
سلام سب کو ہے اُس نے لکھا
سلام کا بس جواب دے کر ،حسین چپ ہیں
اُجڑ گیا ہے۔۔۔

ہوئے ہیں زخموں سے چور مولا
بدن سے بہتا ہے خوں کا دریا
کہے تو رکھ دوں اُلٹ کے دنیا
مدد کو آیا ہے رن میں زاعفر،حسین چپ ہیں
اُجڑ گیا ہے۔۔۔

لڑی اکیلے میں وہ لڑائی
دہائی دینے لگی خدائی
صدا جونہی ارجعی کی آئی
نیام میں زوالفقار رکھ کر ،حسین چپ ہیں
اُجڑ گیا ہے۔۔۔

حسین گوہر یہ جانتا ہے
سفر یہ چودہ سو سال کا ہے
ستم جو اب تک وہ سہہ رہا ہے
ہے راز اس میں کوئی تو اکبر،حسین چپ ہیں
اُجڑ گیا ہے۔۔۔


ujad gaya hai batool ka ghar hussain chup hai
khuda ki marzi may sar jhuka kar hussain chup hai
ya ghareeb ya hussain

ye sabr ki kaunsi hai manzar
pisar ka barchi se chid gaya dil
wo has raha hai sirhane qatil
uthaaye haaton pe laashe akbar, hussain chup hai
ujad gaya hai....

gaya hai laakhon may wo akela
chalaye jaate hai teer aada
kahin se barchi kahin se bhaala
baras rahe hai kahin se pathar, hussain chup hai
ujad gaya hai....

laga hai kyon mere dil ko dhadka
lahoo se kiske ye tar hai chehra
kahan hai asghar batayein maula
sawaal asghar ki maa ka sunkar, hussain chup hai
ujad gaya hai....

naseeb-e-raahib jo sheh ne badla
yahan pe khamosh kibriya tha
magar ye manzqar hai karbala ka
yahan pe dekar khuda ko akbar, hussain chup hai
ujad gaya hai....

kaha ye qasid ne roke maula
mareez beti ka khat hoo laaya
salaam sabko hai usne likha
salaam ka bas jawab dekar, hussain chup hai
ujad gaya hai....

hue hai zakhmo se chur maula
badan se behta hai khoon ka darya
kahe to rakh doo ulat ke dunya
madad ko aaya hai ran may zaafar, hussain chup hai
ujad gaya hai....

ladi akela may wo ladaai
duhaai dene lagi khudaai
sada jyon hi irjaii ki aayi
nayaam may zulfiqar rakh kar, hussain chup hai
ujad gaya hai....

hussain gohar ye jaanta hai
safar ye chaudo sao saal ka hai
sitam jo ab tak wo seh raha hai
hai raaz isme koi to akbar, hussain chup hai
ujad gaya hai....
Noha - Hussain Chup Hai
Shayar: Hasnain Akbar
Nohaqan: Mir Hassan Mir
Download Mp3
Listen Online