ہم صورت احمد ہو ہم نام خدا اکبر
کیونکر تمہیں ماں دے دے مرنے کی رضا اکبر
ہم صورت احمد ہو

اس عالم غربت میں شہہ کس کو پکاریں گے
کس حال میں ہوتے ہو اب ہم سے جدا اکبر
ہم صورت احمد ہو

تم جاتے تھے مقتل میں بابا کو نہیں دیکھا
کس طرح وہ دیتے تھے جینے کی دعا اکبر
ہم صورت احمد ہو

جب تم نے پکارا تھا میدان سے سرور کو
زینب بھی نکل آئی کہتی تھی میرا اکبر
ہم صورت احمد ہو

شہہ لے کے تو آئے تھے خیمے میں تیرا لاشہ
پر کیسے بتائوں میں جو حال ہوا اکبر
ہم صورت احمد ہو

اس پر بھی مصائب کا کچھ زور نہیں ٹوٹا
شبیر کے ہاتھوں پر اصغر بھی گیا اکبر
ہم صورت احمد ہو

پھر چین سے سو جانا بس اتنا بتا جائو
ہم کس سے غذا مانگیں اور کس سے ردا اکبر
ہم صورت احمد ہو

اب کیسے بتائوں میں زیدی کی تمنا ہے
مرتے ہوئے ہونٹوں پہ ہو نام تیرا اکبر
ہم صورت احمد ہو


hum soorate ahmed ho ham naame khuda akbar
kyon kar tumhay maa dede marne ki raza akbar
ham soorate ahmed....

is aalame ghurbat may sheh kisko pukarenge
kis haal may hote ho bab se juda akbar
ham soorate ahmed....

tum jaate thay maqtal may baba ko nahi dekha
kis tarha wo dete thay jeene ki dua akbar
ham soorate ahmed....

jab tumne pukara tha maidan se sarwar ko
zainab bhi nikal aayi kehti thi mera akbar
ham soorate ahmed....

sheh leke to aaye thay qaime may tera laasha
par kaise bataun mai jo haal hua akbar
ham soorate ahmed....

is par hi masaib ka kuch zor nahi toota
shabbir ke haaton par asghar bhi gaya akbar
ham soorate ahmed....

phir chain se sojana bas itna bata jao
hum kisse ghiza maange aur kisse rida akbar
ham soorate ahmed....

ab kaise bataun mai zaidi ki tamanna hai
marte hue honton ho naam tera akbar
ham soorate ahmed....
Noha - Hum Soorate Ahmed
Shayar: Zaidi
Nohaqan: Ali Zia Rizvi
Download Mp3
Listen Online