شہہ کہتے تھے بی بی ہمیں اب جانے دو گھر سے
وہ کہتی تھی سایا جو یہ اُٹھ جائے گا سر سے
ہائے ہائے میں تمہیں ڈھونڈ کے لائوں گی کدھر سے

شہہ کہتے تھے مقتل ہی میں پائو گی سکینہ
ہم ہوں گے کہیں تم کہیں جائوگی سکینہ

ڈھونڈو گی تو پھر ہم کو نہ پائو گی سکینہ
ہم ہوں گے کہیں۔۔۔

جب عمر تھی کم ہم بھی چُھوٹے تھے یونہی ماں سے
سوتے تھے لپٹ کر یونہی خاتونِ جہاں سے
کوچ اُن کا ہوا سامنے آنکھوں  کے جہاں سے
صدمے یہی اب تم بھی اُٹھائو گی سکینہ
ہم ہوں گے کہیں۔۔۔
ڈھونڈو گی تو۔۔۔

جنگل میں بہت قافلے لُٹ جاتے ہیں بی بی
برسو ں جو رہے ساتھ وہ چھُٹ جاتے ہیں بی بی
ْْحسرت سے یہ دم سینوں میں گھُٹ جاتے ہیں بی بی
چھُٹ جائوگی بابا کو نہ پائوگی سکینہ
ہم ہوں گے کہیں۔۔۔
ڈھونڈو گی تو۔۔۔

دن ہجر کے آپہنچے گئے وصل کے ایّام
لکھا تھا بہت کم تیری تقدیر میں آرام
دکھلائے گی یہ صبح یتیمی کی تمہیں شام
کس طرح سے یہ داغ اُٹھائو گی سکینہ
ہم ہوں گے کہیں۔۔۔
ڈھونڈو گی تو۔۔۔
یوں کہنے لگی سینے پہ منہ رکھ کے وہ نادان
کہتے ہیں یتیمی کسے میں آپ پہ قربان
حضرت نے کہا سخت مصیبت ہے میری جان
چین ایسی ازیت میں نہ پائو گی سکینہ
ہم ہوں گے کہیں۔۔۔
ڈھونڈو گی تو۔۔۔

اب آیا سمجھ میں یہ سخن ہونٹوں پہ لانا
کیوں کہتے تھے زینب اسے چھاتی پہ سُلانا
ارے بانو میرے پیچھے نہ سکینہ کو رُلانا
دل کہتا تھا بابا کو نہ پائو گی سکینہ
ہم ہوں گے کہیں۔۔۔
ڈھونڈو گی تو۔۔۔

خاموش انیس اب کے جگر چاک ہے غم سے
بہتا ہے لہو اشک کی جاں دیدئہ نم سے
دُوری یہ زیارت سہی جاتی نہیں ہم سے
کیا روضے پہ اپنے نہ بُلائو گی سکینہ
ہم ہوں گے کہیں۔۔۔
ڈھونڈو گی تو۔۔۔


sheh kehte thay bibi hamay ab jaane do ghar se
wo kehti thi saaya jo ye uth jayega sar se
haye haye mai tumhe dhoond ke laungi kidhar se

sheh kehte thay maqtal hi may paogi sakina
hum honge kahin tum kahin jaogi sakina

dhoondogi to phir hum ko na paogi sakina
hum honge kahin....

jab umr thi kam hum bhi chutay thay yuhin maa se
sotay thay lipat kar yuhin khatoon-e-jina se
kooch unka hua saamne ankhon ke jahan se
sadme yehi ab tum bhi uthaogi sakina
hum honge kahin....
dhoondogi to....

jangal may bahot khaafle lut jaate hai bibi
barso jo rahe saath wo chuth jaate hai bibi
hasrat se ye dam seeno may ghut jaate hai bibi
chuth jaogi baba ko na paogi sakina
hum honge kahin....
dhoondogi to....

din hijr ke aa pahunche gaye wasl ke ayyam
likha tha bahot kam teri taqdeer may aaram
dikhlayegi ye subho yateemi ki tumhe shaam
kis tarha se ye daagh uthaogi sakina
hum honge kahin....
dhoondogi to....

yun kehne lagi seene pe moo rakh ke wo nadan
kehte hai yateemi kisay mai aap pe qurbaan
hazrat ne kaha saqt musibat hai meri jaan
chain aisi aziyat may na paogi sakina
hum honge kahin....
dhoondogi to....

ab aaya samajh may ye sukhan honton pe laana
kyun kehte thay zainab isay chaati pe sulana
are bano mere peeche na sakina ko rulana
dil kehta tha baba ko na paogi sakina
hum honge kahin....
dhoondogi to....

khamosh anees ab ke jigar chaak hai gham se
behta hai lahoo ashk ki jaan dida e nam se
doori ye ziyarat sahi jaati nahi hum se
kya rauze pe apne na bulaogi sakina
hum honge kahin....
dhoondogi to....
Noha - Hum Honge Kahin
Shayar: Anees
Nohaqan: Nadeem Sarwar
Download Mp3
Listen Online