العجل العجل العجل

یابن ازّہرا یابن ازّہرا
یابن ازّہرا یابن ازّہر

یا سیّدی یا مرشدی
یا مولائی یا عصرزّماں
شام و سحر اے رہبر
اے تاجدارِ کون و مکان
نورِ خدا اے مُنتظر
ہے منتظر یہ سارا جہاں
یابن ازّہرا یابن ازّہرا

کہتے ہیں سب جن و بشر
ارض و سمائ و دشت و جبل
ہیں مشکلیں لاکھوں مگر
ہے مشکلوں کا تُو ہی حل
آنے لگی دیکھو صدا
حئی اعلی خیرالعمل
ہم دیکھیں گے
لازم ہے کہ ہم بھی دیکھیں گے

وہ روز کہ جس کا وعدہ ہے
جو لوح ِ ازل پہ لکھا ہے
جو تیرا ہے جو میرا ہے
کونین میں جس کا چرچہ ہے
جب لوح و قلم کے چہرے سے
پردے سرکائے جائیں گے
ہم دیکھیں گے
لازم ہے کہ۔۔۔

کچھ رات گئی کچھ باقی ہے
پردوں میں سحر کچھ کہتی ہے
دل پر جو یہ دستک ہوتی ہے
غیبت میں کوئی اک ہادی ہے
جو حاضر و ناظر و قائم ہے
وہ آئیں گے ہاں آئیں گے
ہم دیکھیں گے
لازم ہے کہ۔۔۔

ہاں دیکھ بدلتے موسم کو
کیا ہوگیا نظمِ عالم کو
چین آتا نہیں ہے آخر کیوں
بے چینی یہ نسلِ آدم کو
دینے دے صدا اُس قائم کو
ہر اُلجھن وہ سُلجھائیں گے
ہم دیکھیں گے
لازم ہے کہ۔۔۔

یہ جعفرِ صادق نے ہے کہا
وہ روزِ جمعہ ہے عاشورا
جب اُن کی سواری آئے گی
تعظیم کرے گی کربوبلا
کعبے سے ازاں پھرگونجے گی
وہ ایک علم لہرائیں گے
ہم دیکھیں گے
لازم ہے کہ۔۔۔

وہ مسجدِ کوفہ میں آکر
مسجد کا سجائیں گے ممبر
وہ پُرسہ لیں گے دنیا سے
شبیرکا خود ذاکر بن کر
زینب کے مصائب کرکے بیاں
ممبر پہ ہی غش کھا جائیں گے
ہم دیکھیں گے
لازم ہے کہ۔۔۔

آنکھوں میں امامِ زمانہ کی
ہجری۱۶رہتی ہے سدا اکسٹھ
کہتے ہیں زیارتِ ناحیہ میں
میں بھول نہیں سکتا ہوں کبھی
مابینِ زمین و زین جو تھا
وہ لاشہ بھول نہ پائیں گے
ہم دیکھیں گے
لازم ہے کہ۔۔۔

پیغامِ امامِ زمانہ ہے
گر جلد مجھے بُلوانا ہے
تقویٰ کے مصلّے پر جاکر
پیغامِ امن پھیلانا ہے
جب علم کے دیپ جلائو گے
ہم غیبت سے آجائیں گے
ہم دیکھیں گے
لازم ہے کہ۔۔۔

تعجیل ہو اب ابنِ زہرا
ہے ورد ریحان اور سرور کا
دنیا کو ضرورت آپ کی ہے
دیتی ہے صدا یہ کربوبلا
وہ روز کہ جس کا وعدہ ہے
وہ وعدہ آپ نبھائیں گے
ہم دیکھیں گے
لازم ہے کہ۔۔۔


al ajal al ajal al ajal

yabnaz zahra maa zehra
yabnaz zahra ye fathema

ya sayyedi ya murshadi
ya maulayi ya hassan mujtaba
shaam o sehar ay rahabar
ay taajdare kaun-o-makan
noor e khuda ay muntazar
hai muntazir ye saara jahan
yabnaz-zahra ya fatema

kehte hai sab jinn-o-bashar
arz o saman o dasht o jamal
hai mushkilay lakhon magar
hai muhskilon ka tu hi hal
aane lagi dekho sada
hayya ala khairil amal
hum dekhenge
lazim hai ke hum bhi dekhenge

wo roz ke jiska waada hai
jo lauh e azal pe likha hai
jo tera hai jo mera hai
kaunain may jiska charcha hai
jab lauh o qalam ke chehre se
parde sarkaye jayenge
hum dekhenge
lazim hai ke....

kuch raat gayi kuch baaki hai
pardon may sehar kuch kehti hai
dil par jo ye dastak hoti hai
ghaibat may koi ek hadi hai
jo haazir o naazir o qaaim hai
wo aayenge haa aayenge
hum dekhenge
lazim hai ke....

haa dekh badalte mausam ko
kya ho gaya nazm-e-aalam ko
chain aata nahi hai aakhir kyun
be-chaini ye nasle adam ko
dene de sada us qaaim ko
har uljhan wo suljha-yenge
hum dekhenge
lazim hai ke....

ye jaffar e sadiq ne hai kaha
wo roz juma hai ashura
jab unki sawari aayegi
tazeem karengi karbobala
kaabe se azan phir gunjegi
wo ek alam lehrayenge
hum dekhenge
lazim hai ke....

wo masjid-e-kufa may aakar
majlis ka saja-yenge mimbar
wo pursa lenge dunya se
shabbir ka khud zakir bankar
zainab ke masayab karke bayan
mimbar pe hi ghash khajayenge
hum dekhenge
lazim hai ke....

ankhon may imam-e-zamana ki
rehti hai sada ek sat hijri
kehte hai ziyarat e nahiya may
mai bhool nahi sakta hoo kabhi
maa baine zameen o zeen jo tha
wo laasha bhool na payenge
hum dekhenge
lazim hai ke....

paighame imam-e-zamana hai
gar jald mujhe bulwana hai
taqwe ke musalle par jaakar
paighame aman phailana hai
jab ilm ke deep jalaoge
hum ghaibat se aa-jayenge
hum dekhenge
lazim hai ke....

tajeel ho ab ibn-e-zehra
hai vird rehaan o sarwar ka
dunya ko zaroorat aap ki hai
deti hai sadaye karbobala
wo roz ke jis ka waada hai
wo waada aap nibhayenge
hum dekhenge
lazim hai ke....
Noha - Hum Dekhenge
Shayar: Rehaan Azmi
Nohaqan: Nadeem Sarwar
Download Mp3
Listen Online