ہائے زینب رو رہی ہے کربلا خاموش ہے
جل گئے ہیں سارے خیمے،علقمہ خاموش ہے
ہائے زینب رو رہی ہے ۔۔۔۔۔

چھِن گئی ہے سر سے چادر،کیا کرے بنتِ علی
اُس طرف دریا کنارے با وفا خاموش ہے
ہائے زینب رو رہی ہے ۔۔۔۔۔

آ گئی شام ِ غریباں، ہو گئے قیدی حرم
آبلے پائوں کے روئے راستہ خاموش ہے
ہائے زینب رو رہی ہے ۔۔۔۔۔
__________________________________________________

اندھیرا پھیل گیا بُجھ گئے چراغ تمام،
شہید ہو گئے سبطِ نبی کے لال و بام
ردائیں چھیننے جس وقت فوجِ شام بڑھی،
لبوں پہ زینبِ مضطر کے تھا حُسین کا نام
___________________________________________________

اب کہاں زینب کو چین آئے گا اکبر کے بغیر
کھا کے برچھی اکبرِگُل بقابہ خاموش ہے
ہائے زینب رو رہی ہے ۔۔۔۔۔

کیسے گُزرے گی رسن بستہ سرِ مقتل بہن
بے کفن بھائی ہے رن میں بے ردا خاموش ہے
ہائے زینب رو رہی ہے ۔۔۔۔۔
___________________________________________________

اب کوئی روتا ہی نہیں اشکوں کا دریا بہہ گیا،
صرف رونے کے لیئے زینب ہے راہِ شام میں
تعزیانے مارتے ہیں اشقیائ سجاد کو،
کوئی بھی انسان نہیں باقی سپاہِ شام میں
___________________________________________________

رو چُکی زینب بھرے گھر کو سرِ کرب و بلا
کربلا سے شام تک ساری فضا خاموش ہے
ہائے زینب رو رہی ہے ۔۔۔۔۔

ہے قلم کی نوک میں آ نسو غمِ شبیر کے
عرش پہ ریحان شاہِ انبیائ خاموش ہے
ہائے زینب رو رہی ہے ۔۔۔۔۔


haaye zainab ro rahi hai karbala khamosh hai
jal gaye hai saare khaime, al-qama khamosh hai
haaye zainab ro rahi hai....

chin gayi sar se hai chaadar, kya kare binte ali
us taraf darya kanare ba-wafa khamosh hai
haaye zainab ro rahi hai....

aagayi sham-e-ghareeba, ho gaye qaidi haram
aabile paaon ke rowe raasta khamosh hai
haaye zainab ro rahi hai....
___________________________________________________

andhera phail gaya bujh gaye charaagh tamaam,
shaheed hogaye sipt-e-nabi ke laal-o-bam
ridaaen cheen ne jis waqt fauje shaam badi,
labo pe zainab-e-mustar ke tha hussain ka naam
___________________________________________________

ab kahan zainab ko chain aayega akbar ke baghair
khaake barchi akbar-e-gulbuqaba khamosh hai
haaye zainab ro rahi hai....

kaise guzregi rasan-basta sare maqtal behan
be-kafan bhai hai ran may be-rida khamosh hai
haaye zainab ro rahi hai....
___________________________________________________

ab koi rota hi nahi ashkon ka darya beh gaya,
sirf ronay ke liye zainab hai raah-e-shaam may
taaziyane maarte hai ashkiyan sajjad ko,
koi bhi insaan nahi baakhi sipaahe shaam may
___________________________________________________

ro chuki  zainab bhare ghar ko sar-e-karbobala
karbala se shaam tak saari faza khamosh hai
haaye zainab ro rahi hai....

hai qalam ki nok may aansu ghame shabbir ke
arsh pe rehaan shah-e-ambiya khamosh hai
haaye zainab ro rahi hai....
Noha - Haye Zainab Ro Rahi Hai
Shayar: Rehaan Azmi
Nohaqan: Hasan Sadiq
Download Mp3
Listen Online