مولا مقتل میں سر کو جھکا ئے
لاشِ اکبر پہ تنہا کھڑے ہیں
دھیمے دھیمے ٹپکتے ہیں آنسو
ہائے صغرا کا خط پڑھ رہے ہیں
بولے کیا یہ جواب اِس کا دوں
ہائے صغرا بتا کیا لکھوں
اور صغرا بتا کیا لکھوں

میں تو پردیس میں لُٹ گیا
اپنے لشکر کو میں اور رُو چکا
تیرے بابا غریب ہوگیا
اور اس کے سوا کیا لکھوں
ہائے صغرا بتا ۔۔۔

آندھیاں میرا گھر لے گئیں
میرے لختِ جگر کے گئیں
میرا نورِ نظر لے گئیں
اور اِس کے سوا کیا لکھوں
ہائے صغرا بتا ۔۔۔

خط تیرا اب سُنائو کسے
کون میری صدا پر اُٹھے
شب کو جاگے ہوئے سوگئے
اور اس کے سوا کیا لکھوں
ہائے صغرا بتا ۔۔۔

ہائے صغرا وہ بھائی تیرا
جس نے تجھ سے تھا وعدہ کیا
کھا گئی اُس کو کربوبلا
اور اس کے سوا کیا لکھوں
ہائے صغرا بتا ۔۔۔

پیار تُو نے ہے جس کو لکھا
گھٹنیوں بھی جو نہ چل سکا
ہاں وہ اصغر بھی اب نہ رہا
اور اس کے سوا کیا لکھوں
ہائے صغرا بتا ۔۔۔

شب کو دولہا بنایا جسے
رات آئی نہ مہندی جسے
روئیں سہرے کی لڑیاں جسے
اور اس کے سوا کیا لکھوں
ہائے صغرا بتا ۔۔۔

اب سکینہ کا حافظ خدا
وقت زینب پہ بھی ہے کڑا
مجھ کو گھیرے ہوئے ہے قضا
اور اس کے سوا کیا لکھوں
ہائے صغرا بتا ۔۔۔

یہ تو اچھا ہوا لاڈلی
یہ تو اچھا ہوا لاڈلی
اپنے گھر میں ہی تُو رہ گئی
بے ردائی سے تو بچ گئی
اور اس کے سوا کیا لکھوں
ہائے صغرا بتا ۔۔۔

خط وہ ریحان و سرور تھا کیا
خاک سے میرا مولا اُٹھا
لاشِ اکبر پہ خط رکھ دیا
اور اس کے سوا کیا لکھوں
ہائے صغرا بتا ۔۔۔


maula maqtal may sar ko jhukaye
laash e akbar pe tanha khade hai
dheeme dheeme tapakte hai aansoo
haye sughra ka khat padh rahe hai
bolay kya mai jawab is ka doo
haye sughra bata kya likhun
aur sughra bata kya likhun

mai to pardes may lut gaya
apne lashkar ko mai ro chuka
tera baba ghareeb hogaya
aur iske siva kya likhun
haye sughra bata....

aandhiya mera ghar legayi
mere lakht e jigar legayi
mera noor e nazar legayi
aur iske siva kya likhun
haye sughra bata....

khat tera ab sunaun kise
kaun meri sada par uthe
shab ko jaage huve sogaye
aur iske siva kya likhun
haye sughra bata....

haye sughra wo bhai tera
jisne tujhse tha wada kiya
kha gayi usko karbobala
aur iske siva kya likhun
haye sughra bata....

pyar tune tha jisko likha
ghutniyo bhi jo na chal saka
haa wo asghar bhi ab na raha
aur iske siva kya likhun
haye sughra bata....

shab ko dulha banaya jise
raas aayi na mehendi jise
royi sehre ki ladiyan jise
aur iske siva kya likhun
haye sughra bata....

ab sakina ka hafiz khuda
waqt zainab pe bhi hai kada
mujhko ghere huve hai qaza
aur iske siva kya likhun
haye sughra bata....

ye to accha huva laadli
apne ghar may tu rehgayi
beridayi se to bachgayi
aur iske siva kya likhun
haye sughra bata....

khat wo rehaan o sarwar tha kya
khaak se mera maula utha
laash e akbar pe khat rakhdiya
aur iske siva kya likhun
haye sughra bata....
Noha - Haye Sughra Bata Kya
Shayar: Rehaan Azmi
Nohaqan: Nadeem Sarwar
Download Mp3
Listen Online