ہائے موسیٰ ئِ کاظم
اک غریب الوطن قید میں مر گیا
پُل پہ بغداد کے ہے جنازہ رکھا

خون آنکھوں سے اپنی بہاتے ہوئے
ہتھکڑی بیڑیاں طوق پہنے ہوئے
قید سجاد کی یاد کرتا ہوا
اک غریب الوطن ۔۔۔

جس کے اٹھارہ بیٹے جواں سال کے
اُس کی میت کو مزدور لے کر چلے
بین کرتی چلی ساتھ میں سیدہ
اک غریب الوطن ۔۔۔

اجنبی شہر ہے دور اہلِ وطن
تیرے بابا کو دے کون غُسل و کفن
آئو جلدی وطن سے امامِ رضا
اک غریب الوطن ۔۔۔

صبر کرنا ہے صغریٰ کے جیسا تجھے
راستہ دیکھنا باپ کا چھوڑ دے
جا کے معصومہِ قُم سے کہہ دے ہوا
اک غریب الوطن ۔۔۔

قید میں چل بسا شاہِ کون و مکاں
اب تو مظلوم کی کھول دو بیڑیاں
تم نے چاہا تھا جو لو وہی ہو گیا
اک غریب الوطن ۔۔۔

لاش پر بھی نہیں رونے والا کوئی
وارثِ دین کی ہائے بے وارثی
ڈھونڈتی ہے قضا دفن کرنے کی جا
اک غریب الوطن ۔۔۔

بین کرتے تکلم سبھی آ گئے
کربلا سے مدینے سے اور شام سے
چودہ برسوں کا قیدی رہا ہو گیا
اک غریب الوطن ۔۔۔


haye moosa-e-kazim
ek ghareebul watan qaid may mar gaya
pul pe baghdad ke hai janaza rakha

khoon aankhon se pani bahate hue
hatkadi bediyan tauq pehne hue
qaid sajjad ki yaad karta hua
ek ghareebul watan....

jiske athara bete jawan saal ke
uski mayyat ko mazdoor lekar chale
bain karti chali saath may sayyeda
ek ghareebul watan....

ajnabi shehr hai door ahle watan
tere baba ko de kaun ghusl-o-kafan
aao jaldi watan s imame raza
ek ghareebul watan....

sabr karna hai sughra ke jaisa tujhe
raasta dekhna baap ka chor de
jaake masoom-e-qum se kehde hawa
ek ghareebul watan....

qaid may chal basa shahe kaun-o-makan
ab to mazloom ki khol do bediyan
tumne chaha tha jo lo wohi hogaya
ek ghareebul watan....

laash par bhi nahi rone wala koi
warise deen ki haye bewaarsi
dhoonti hai khaza dafn karne ki jaa
ek ghareebul watan....

bayn karte takkalum sabhi aa gaye
karbala se madine se aur sham se
chauda barson ka qaidi reha hogaya
ek ghareebul watan....
Noha - Haye Moosa e Kazim
Shayar: Mir Takallum
Nohaqan: Mir Hassan Mir
Download Mp3
Listen Online