عباس یا عباس
اے شاہکار عباس

راہ رکھتی ہوں میں ہائے دن ڈھل گیا
دور اتنی تو نہیں گھر سے علقمہ
اور رہوار بھی تیز رفتار کا
میں نے جاتے ہوئے اُن کودی تھی دُعا
بے اثر ہے دعا جانے کیا ہو گیا

خالی کُوزے کہاں تک سنبھالے رہوں
فاضل و مکار کو کیسے تسلی میں دوں
پیاس لینے نہیں دیتی اک پل سکوں
ڈھونڈ لائو اُنہیں ہائے کس سے کہوں
دم اُکھڑنے لگا گھُٹ رہا ہے گلا

کب گئے تھے ارادے سے لڑنے کے وہ
رکھ گئے تھے وہ گھر میں ہی تلوار کو
کہہ رہے تھے وہ مجھ سے سکینہ سُنو
لائو مشکیزہ اے لاڈلی ہم کو دو
میں ہوں در پر کھڑی دیر کیوں ہو گئی

اس اندھیرے میں کیا کر رہے ہیں وہاں
آپ ہی کچھ بتا دیجیئے اماں جاں
اُن کو معلوم ہے میں ہوں تشنہ دہاں
اب تو پتھر ہوئی جا رہی ہے زباں
جینا دشوار ہے خیمے جلنے لگے

بھیا عابد تم ہی جا کے لائو خبر
مشک اتنی تو بھاری نہیں تھی مگر
کے اُٹھا نہ سکے مرتضیٰ کا پسر
اب تو خنجر سے چلنے لگے قلب پر
اے خدا تُو بتا لب پہ اے مصطفیٰ

دفعتاً خون میں ڈوبا علم آگیا
زکمی مشکیزہ بھی تھا علم سے بندھا
پیاسی بچی کے ہاتھوں سے کُوزہ گرا
پھر تو زیرِ علم اک ہی تھی صدا
علقمہ علقمہ تُو بتا تُو بتا

غیب سے آئی آوازِ خیرُالنسا
اے سکینہ چچا تیرا مارا گیا
بازوئوں پہ چلی اُس کے تیغِ جفا
منہ کے بل میرا زمیں پر گرا
خاک پر بیٹھ جا اب نہ دے یہ صدا

اے ریحان و رضا تھا یہ صدمہ بڑا
شور اہلِ حرم میں قیامت کا تھا
کوئی کہتی تھی بھیا تو کوئی چچا
چادروں کا نہ اب کوئی ضامن رہا
چپ سکینہ ہوئی کس سے یہ پوچھتی


abbas ya abbas
ay shataqar abbas

raah takti hoo mai haye din dhal gaya
door itni to nahi ghar se alqama
aur rehwar bhi tez raftar ka
maine jate huwe unko di thi dua
be-asr hai dua jaane kya hogaya

khaali kooze kahan tak sambhale rahoon
fazlo maqqar ko kaise tasalli mai doon
pyas lene nahi deti ek pal sukoon
dhoond lao unhe haye kis se kahoon
dam ukhadne laga ghut raha hai gala

kab gaye thay irade se ladne ke wo
rakh gaye thay wo ghar may hi talwar ko
keh rahe thay wo mujse sakina suno
lao mashkeeza ay laadli hum ko do
mai hoo dar par khadi dayr kyun ho gayi

is andhere may kya kar rahe hai wahan
aap hi kuch batadijiye amma jaan
unko maloom hai mai hoo tishnadahan
ab to pathar hui jaa rahi hai zuban
jeena dushwar hai qaime jalne lagay

bhaiya abid tumhi jake lao khabar
mashk itni to bhari nahi thi magar
ke utha na sake murtaza ka pisar
ab to khanjar se chalne lagay khalb par
ay khuda tu bata lab pa ay mustufa

daf'atan khoon may dooba alam aagaya
zakhmi mashkeeza bhi tha alam se bandha
pyasi bachi ke hathon se kooza gira
phir to zere alam ek hi thi sada
alqama alqama tu bata tu bata

ghaib se aayi awaaze khairunnisa
ay sakina chacha tera maara gaya
bazuon pe chali uske tayghe jafa
moo ke bal mera zameen par gira
khaak par baith ja ab na de ye sada

ay rehan-o-raza tha ye sadma bada
shor ahle haram may qayamat ka tha
koi kehti thi bhaiya to koi chacha
chadaron ka na ab koi zaamin raha
chup sakina hui kis se ye poochti
Noha - Haye Abbas
Shayar: Rehaan Azmi
Nohaqan: Syed Raza Abbas Zaidi
Download mp3
Listen Online