ہائے حسینا
حسن ہائے حسینا
حسین ہائے حسینا

کرتی تھیں زہرہ دشت میں گریہ
شمر نے کاٹا سر شاہ دیں کا
حسن ہائے حسینا

ارض و سماں کے اور فضا کے
دشت جفا کے لب پہ ہے نالہ
حسن ہائے حسینا

نیزے کے اوپر اور سر سرور
ٹاپوں کے زد شاہ کا لاشہ
حسن ہائے حسینا

خیموں سے اٹھے آگ کے شعلے
کون بچائے رانڈیں ہیں تنہا
حسن ہائے حسینا

کس کو اٹھائے کس کو چھڑائے
کس کو بچائے ثانی زہرہ
حسن ہائے حسینا

کیوں نہ انیس ہم یوں کریں ماتم
دل پہ ہے غم ٹکڑے ہے سینہ
حسن ہائے حسینا


haye hussaina
hassan haye hussaina
hussain haye hussaina

karti thi zehra dasht may girya
shimr ne kaata sar shahe deen ka
hassan haye....

arzo sama ke aur fiza ke
dashte jafa ke lab pe hai naala
hassan haye....

naize ke upar aur sare sarwar
taapo ki zat shaah ka laasha
hassan haye....

qaimo se uthay aag ke sholay
kaun bachaye raande hai tanha
hassan haye....

kisko uthaaye kisko churaaye
kisko bachaaye saaniye zehra
hassan haye....

kyon na anees hum yun kare matam
dil pa gham tukde hai seena
hassan haye....
Noha - Hassan Haye Hussaina
Shayar: Anees Pehersari
Nohaqan: Ali Zia Rizvi
Download Mp3
Listen Online