حق کر گئے مادر کے ادا سارے کے سارے
ماموں پہ فدا ہو گئے زینب کے دُلارے
حق کر گئے ۔۔۔

سمجھاتی تھی بچوں کو بڑے پیار سے زینب
بھولے سے نہ جانا کبھی دریا کے کنارے
حق کر گئے ۔۔۔

پیاسی ہے سکینہ رہے ہر آن یہی دھیان
پانی کا تصور نہ ہو ذہنوں میں تمہارے
حق کر گئے ۔۔۔

گھوڑوں سے گرو بھی توصدا رن سے نہ دینا
دیکھو میں خفا ہوں گی جو ماموں کو پُکارے
حق کر گئے ۔۔۔

میں خیمے سے دیکھوں گی جری کون ہے تم میں
للکار کے پہلے جو بنِ سعد کو مارے
حق کر گئے ۔۔۔

وعدہ جو کیا ماں سے وفا کر گئے دونوں
پیاسے ہی لڑے پیاسے ہی دنیا سے سدھارے
حق کر گئے ۔۔۔

صد ہے تو ہے اے دشتِ بلا تیری زمیں نے
سب چھین لیئے زینبِ مُضطر کے سہارے
حق کر گئے ۔۔۔

پالا تھا جنہیں گود میں وہ جا بسے بن میں
ا ب کون ہے زینب کو جو ماں کہہ کے پُکارے
حق کر گئے ۔۔۔


haq kar gaye maadar ke ada saare ke saare
mamu pe fida hogaye zainab ke dulaare
haq kar gaye....

samjhati thi bachon ko bade pyar se zainab
bhjoole se na jaana kabhi darya ke kanare
haq kar gaye....

pyasi hai sakina rahe har aan yahi dhyan
pani ka tasavvur na ho zehno may tumhare
haq kar gaye....

ghodon se giro bhi to sada ran se na dena
dekho mai khafa hongi jo mamu ko pukare
haq kar gaye....

mai qaime se dekhungi jari kaun hai tum may
lalkaar ke pehle jo bine-saad ko maare
haq kar gaye....

wada jo kiya maa se wafa kar gaye dono
pyase hi laday pyase hi dunya se sidhaare
haq kar gaye....

sad hai to hai ay dashte bala teri zameen ne
sab cheen liye zainabe muztar ke sahare
haq kar gaye....

paala tha jinhe godh may wo jaa base ban may
ab kaun hai zainab ko jo maa kehke pukaare
haq kar gaye....
Noha - Haq Kar Gaye Ada

Nohaqan: Sachey Bhai
Download Mp3
Listen Online