میں کربلامیں کھڑا ہوں لباسِ سوگ میں ہوں
ہے اربعین حسین اور حسینی لشکر کا
کڑوڑوں لوگ ہیں سارے لباسِ سوگ میں ہیں
ہر ایک نسل ہر ایک رنگ ہر زبان کے لوگ
نگاہیں روضئہ شبیر کے طواف میں ہیں
لبوں پہ ہائے حسینا غریب ہائے حسین
سنِ ہجری کا اور اُس محرم کا۱۶خیال آتا ہے اکسٹویں
یہی مقام تھا اک بندئہ خدا جسکا حسین نام تھا
رہِ خدا میں ہتیلی پہ سر اُٹھائے ہوئے
ہر ایک دور کے انساں کی آبرو کیلئے
کے زخم اُٹھاتا رہا۲۷وہ اپنے دل پہ بہتر  
وہ اپنے جسم پہ زخموں پہ زخم کھاتا رہا
قدم بڑھاتا رہا ،قدم بڑھاتا رہا

بس ایک عزم تھا انسان سُرخروہوجائے
بس ایک دُھن تھی کہ انسانیت نہ مرجائے

انسانیت پہ ہے احساں حسین کا
احسان ہی تو ہے احسان کا صلہ
ہر دل میں یا حسین ہر دل میں کربلا
بیدار کر دیا جو زمانہ حسین نے
بے ساختہ تمام زمانہ یہ کہہ اُٹھا
کہ ہمارے ہیں یاحسین

انسانیت کی شان بڑھائی حسین نے
انسانیت بشر کو سکھائی حسین نے
انسانیت کی پیاس بجھائی حسین نے
انسان جب حسین کے پیکر میں ڈھل گیا
انسانیت پُکاری وتوعزّو من تشا
کہ ہمارے ہیں یاحسین

دنیا کے ہر ادب میں ہے حثّہ حسین کا
دنیا کی ہر زباں پہ ہے قبضہ حسین کا
انساں سمجھ رہا ہے یہ رُتبہ حسین کا
تاریخ کو حسین نے حیران کر دیا
سارے جہاں کے اہلِ قلم نے یہ لکھ دیا
کہ ہمارے ہیں یاحسین

سورے میں ماو طیںکے اللہ نے سُنایا
تخلیقِ قُل میں انساں اشرف تجھے بنایا
انساں کا درد دل میں انسان کے اُتارا
انسانیت کا مکتب گھر پنجتن کا رکھا
اُس گھر میں پنجتن کے اک شہر کو بسایا
پھر اپنا خون دے کے اُس شہر کو سنوارا
یہ شہرنینوا ہے یہ شہر ماریہ ہے
یہ شہر کربلا ہے یہ شہر کربلا ہے
دل ہے تو کربلا دل ہے تو یاحسین
کہ ہمارے ہیں یاحسین

انسانیت سمجھنے چلو کربلا چلو
ہاں تھام لو حسین کے دامن کو تھام لو
حُر جون اور حبیب کی صف میں کھڑے رہو
دل ہے تو اب حسین کی آواز کو سنو
فرماتے تھے حسین وہ انسان نہیں ہے
لُوٹے جو دل کا چین وہ انسان نہیں ہے
کہ ہمارے ہیں یاحسین

انسانیت سمجھنے چلو کربلا چلو
ہاں تھام لو حسین کے دامن کو تھام لو
حُر جون اور حبیب کی صف میں کھڑے رہو
دل ہے تو اب حسین کی آواز کو سنو
فرماتے تھے حسین وہ انسان نہیں ہے
لُوٹے جو دل کا چین وہ انسان نہیں ہے
روئے نہ جس کے نین وہ انسان نہیں ہے
ہنس دے جو سُن کے بین وہ انسان نہیں ہے
اسانیت بچائے وہ انسان ہے انسان ہو انسان
انساںکا دکھ اُٹھائے وہ انسان ہے انسان
درسِ وفا سیکھائے وہ انسان ہے انسان
جو سب پہ رحم کھائے علم و عمل بڑھائے  
انسانیت بچائے وہ انسان ہے انسان
انسان کو حسین نے انساں بنا دیا
انسانیت کے لب پہ مسلسل تھی یہ صدا
کہ ہمارے ہیں یاحسین

دو طرح کے ہوا کرتے ہیں جہاں میں انساں
ہیں جدا راستے دونوں کے بقولِ قرآں
آدمی ایک یزیدِ ازلی میں اُبھرا
ایک انسان حسین ابنِ علی میں اُبھرا
اُس طرف خام خیالی نیا اسلام بنے
اِس طرف عزمِ جلالی کے شریعت نہ مٹے
اُس طرف سلطنت و دولت و طاقت کو غرور
اِس طر ف چھوٹا سا گھر فاقوں میں ہے ممبئہ نور
اِس طرف عزمِ جلالی کے شریعت نہ مٹے
اُس طرف سلطنت و دولت و طاقت کو غرور
اِس طر ف چھوٹا سا گھر فاقوں میں ہے ممبئہ نور
ایک طاقت کے تکبّر میں جو اِتراکے چلا
دوسرا ناناکے مرقد سے دُعا پاکے چلا
ایک نو لاکھ کے لشکر کو لیئے ساتھ چلا
دوسرا گود میں اصغر کو لیئے ساتھ چلا
اُس طرف نیزے تھے تلواریں تھیں اور بھالے تھے
اِس طرف شوقِ شہادت لئے دل والے تھے
اُس طرف جشن مناتے تھے زمانے والے
اِس طرف بیکس و بے آس مدینے والے
اک طرف تشنہ دہاں سب کے سب خشک زباں
اُن کا مقتل تھا جہاں ریت ساری تھی تپاں
دُور تھی نہرِ رواں الحفیظ و الاماں
کیا دل تھا دل حسین علیہ السلام کا
جس میں کوئی خیال نہ تھا انتقام کا
دل تھا تو دل پہ کارِ رسالت اُٹھالیا
دل تھا تو دل پہ نُورِ شہادت اُٹھا لیا
دل تھا تو دل پہ بارِ قیامت اُٹھالیا
دل تھا خدا کے عشق میںسب گھر لُٹادیا
اُٹھالیا۲۷دل تھا تو دل پہ داغِ بہتر
دل تھا سنبھل کے لاشئہ اکبر اُٹھالیا
حد ہے جنازئہ علی اصغر اُٹھالیا
حسین دل ہے تیرا

کربلا کیا تھی لعینوں کی شقاوت کیا تھی
سوچ انسان کے سادات کی غربت کیا تھی
عید گزری ہے ابھی یعنی کہ عیدِ قرباں
آپ نے پورا کیا ہوگا وہ رُکنِ ایماں
چندشرطیں ہیں زبیحہ کی برائے انساں
شرطِ اوّل ہے کہ کم سن نہ ہو بیمار نہ ہو
اور بھوکا نہ ہو پانی کا طلبگار نہ ہو
رُو بہ رُو سامنے حیوان کے حیوان نہ ہو
وقتِ زبح وہ گھڑی بھر کو پریشان نہ ہو
شرط یہ بھی ہے چھری بھی نہ دیکھائو اُس کو
زبح سے پہلے قضا سے نہ ڈرائو اُس کو
ہو چُھری تیز مگر ہاتھ ہو نرمی سے رواں
ایک ہی وار میں ہوجائے زبیحہ قرباں
الحفیظ و الاماں الحفیظ و الاماں

اب جگر تھام کہ اے مومنوں یہ حال سنو
لو زرا مقتلِ شبیر کا احوال سنو
ہائے حیواں کی دمِ زبح شرائط اتنی
اور جس گھر سے یہ منسوب ہوئی قربانی
اُس کی اولاد کی مقتل میں یہ توقیر ہوئی
کوئی بھی شرط زبیحے کی نبھائی نہ گئی
الحفیظ و الاماں الحفیظ و الاماں

شرطِ اوّل تھی کہ کم سِن نہ ہو دندان بھی ہو ں
دودھ پیتا نہ ہو مرجانے کے امکان نہ ہو ں
تم کو اب مادرِ اصغر کی قسم اہلِ عزا
قتل اصغر جو ہوئے سوچیئے وہ کیا سِن تھا
تیسرا فاقہ تھا چھ ماہ کا سِن واویلا
ایک بھی دانت نہ نکلا تھا علی اصغر کا
ایک بالشت کا کُرتا تھا علی اصغر کا
دودھ پینا بھی نہ چھوٹا تھا علی اصغر کا
پہلا کم سِن ہے کہ جو زبح نہیں نہر ہوا
تیرِسہہ پہلو سے معصوم کو بھی مار لیا
الحفیظ و الاماں الحفیظ و الاماں

شرطِ دوئم تھی کہ حیواں نہ ہو بھوکا پیا سا
اور ہفتم سے تھے سادات بِنا آب و غزا
حلق تر کرتے ہیں قصّاب بھی قربانی کا
اور بہتّر کو دمِ زبح بھی پانی نہ ملا
جلتی ریتی پہ کہیں اکبرو عباس گرے
اور کہیں عون و محمد کہیں قاسم تھے پڑے
زبح حیواں کا نہیںحکم ہے حیواں کے حضور
یاں نہ شبیر سے زینب نہ سکینہ تھی دُور
شاہ اُنکو وہ سوئے شاہِ اُمم دیکھتے تھے
زبح ہوتے تھے حسین اہلِ حرم دیکھتے تھے
منا دکھلاناچھری کا ہے پہئ قربانی
یاں تھا نو لاکھ کے نرغے میں علی کا جانی
ایک جاں لاکھ خریداراے ازم باللہ
ہرطرف ظالم و خوں خوار اے ازم باللہ
اپنے رُتبے کا کسی کو نہ شناسا دیکھا
دیکھا پیاسے نے جسے خون کا پیاسا دیکھا

آخری شرط چھری تیز ہو نرمی سے رواں
تاکہ تڑپے نہ ازیت سے زرا بھی حیواں
آخری سجدہ اُدھر کرنے لگے شاہِ حدا
کُند کرتاہوا خنجر کو ادھر شمر چلا
تیرا ضربوں سے سرِ سیدِ والا کاٹا
اور مظلوم ہر اک ضرب پہ دیتا تھا صدا
ضرب پہ ضرب لگی کہتے تھے اماں اماں
ضربِ آخر پہ کہا ہو میرے عباس کہاں


mai karbala may khada hoo libase sog may hoo
hai arbaeen hussain aur hussaini lashkar ka
karoro log hia sare libase sog may hai
har ek nasl har ek rang har zaban ke log
nigahe rauzae shabbir ki tawaf may hai
labon pe haye hussaina ghareeb haye hussain
khayal aata hai ek-sat sane hijri ka aur us moharam ka
yehi maqam tha ek bandaye khuda jiska hussain naam tha
rahe khuda may hatheli pe sar uthaye hue
har ek daur ke insan ki aabroo ke liye
wo apne dil pe bahattar ke zakhm utha-ta raha
wo apne jism pe zakhmo pe zakhm khata rah
khadam badhata raha, khadam badhata raha

bas ek azhm tha insan surkh roo hojaye
bas ek dhun thi ke insaniyat na marjaye

insaniyat pe hai ehsan hussain ka
ehsan hi to hai ehsan ka sila
har dil may ya hussain har dil may karbala
be-daar kardiya jo zamana hussain ne
be-saakhta tamam zamana ye keh utha
ke hamare hai ya hussain

insaniyat ki shan badhayi hussain ne
insaniyat bashar ko sikhayi hussain ne
insaniyat ki pyas bujhayi hussain ne
insan jab hussain ke paykar may dhal gaya
insaniyat pukari wato izzo mantasha
ke hamare hai ya hussain

dunya ke har adab may hai hissa hussain ka
dunya ki har zaban pe hai khabza hussain ka
insan samajh raha hai ye rutba hussain ka
tareeq ko hussain ne hairan kardiya
saare jahan ke ahle qalam ne ye likhdiya
ke hamare hai ya hussain

soore may maoti ke allah ne sunaya
taqleeqe kul may insan ashraf tujhe banaya
insan ka dard dil may insan ke utara
insaniyat ka maktab ghar panjatan ka rakha
us ghar may panjatan ke ek shehr ko basaya
phir apna khoon deke us shehr ko sawara
ye shehr nainawa hai ye shehr maaariya hai
ye shehr karbala hai ye shehr karbala hai
dil hai to karbala dil hai to ya hussain
hamare hai ya hussain

insaniyat samajhne chalo karbala chalo
haa thaam lo hussain ke daman ko thaam lo
hurr john aur habib ki saf may khade raho
dil hai to ab hussain ki awaaz ko suno
farmate thay hussain wo insan nahi hai
loote jo dil ka chain wo insan nahi hai
roye na jisko nain wo insan nahi hai
hasde jo sunke bain wo insan nahi hai
insaniyat bachaye wo insan hai insan
insan ka dukh uthaye wo insan hai insan
dar se wafa sikhaye wo insan hai insan
jo sab pe rehm khaye ilmo amal badhaye
insaniyat bachaye wo insan hai insan
insan ko hussain ne insan bana diya
insaniyat ke lab pe musalsal thi ye sada
ke hamare hai ye hussain

do tarha ke hua karte hai jahan may insan
hai juda raaste dono ke ba-khaule quran
aadmi ek yazeede azali may ubhra
ek insan hussain ibne ali may ubhra
us taraf aam khayali naya islam bane
is taraf azme jalali ke shariyat na mitay
us taraf saltanato daulato taaqat ka ghuroor
is taraf chota sa ghar faaqo may hai munbaeye noor
ek taaqat ke takabbur may jo itrake chala
doosra nana ke markhad se dua paake chala
ek nau laak ke lashkar ko liye saath chala
doosra godh may asghar ko liye saath chala
us taraf naize thi talware thi aur bhale thay
is taraf shauqe shahadat liye dil wale thay
us taraf jashn manate thay zamane walay
is taraf bekaso be-aas madine walay
ek taraf tashnadahan sab ke sab kushte zaban
unka maqtal tha jahan rayt saari thi tapan
door thi nehre rawan al hafeezo al aman
kya dil tha dil hussain aliahis salam ka
jisme koi khayal na tha inteqam ka
dil tha to dil pe kaare risalat utha liya
dil tha to dil pe noore shahadat utha liya
dil tha to dil pe baare qayamat utha liya
dil tha khuda ke ishq may sab ghar luta diya
dil tha to dil pe daaghe bahattar utha liya
dil tha sambhal ke laashaye akbar utha liya
hadh hai janazaye ali asghar utha liya
hussain dil hai tera

karbal kya thi layeeno ki shakawat kya thi
soch insan ke sadaat ki ghurbat kya thi
eid guzri hai abhi yani ke eide qurban
aap ne poora kiya hoga ye rukne emaan
chand sharte hai zabeeha ki baraye insan
sharte awaal hai ke kamsin na ho bemaar na ho
aur bhooka na ho pani ka talabgaar na ho
roo baroo saamne haiwan ke haiwan na ho
waqte zibha wo ghari bhar ko pareshan na ho
shart ye bhi churi bhi ha dikhao usko
zibha se pehle khaza se na darao usko
ho churi tayz magar haath ho narmi se rawan
ek hi waar may hojaye zabiha qurban
al-hafeezo al-amaan

ab jigar thaam ke ay momino ye haal suno
lo zara maqtale shabbir ka ehwaal suno
haye haiwan ki dame zibha sharayat itni
aur jis ghar se ye mansoob hui qurbani
uski aulaad ki maqtal may ye tauqeer hui
koi bhi shart zabihe ki nibhayi na gayi
al-hafeezo al-amaan

sharte awwal thi ke kamsin na ho tanwan bhi ho
doodh peeta na ho marjane ke imkan na ho
tumko ab madare asghar ki qasam ahle aza
qatl asghar jo huye sochiye wo kya sin tha
teesra ma-pa tha cheh maah ka sin wawaila
ek bhi daant na nikla tha ali asghar ka
ek baalisht ka kurta tha ali asghar ka
doodh peena bhi na choota tha ali asghar ka
pehla kasmin hai ke jo zibha nahi nehr hua
teere seh pehlu se bhi masoom ko maar liya
al-hafeezo al-amaan

sharte doyam thi ke haiwan na ho bhuka pyasa
aur haftum se thay sadaat bina aabo ghiza
halq tar karte hai khassab bhi qurbani ka
aur bahattar ko dame zibha bhi pani na mila
jalti reti pe kahin akbaro abbas giray
aur kahin aun-o-mohamad kahin qasim thay paday
zibhe haiwan ka nahi hukm hai haiwan ke huzoor
yan na shabbir se zainab na sakina thi door
shah unko wo suye shahe umam dekhte thay
zibha hote thay hussain ahle haram dekhte thay
mana churi ka hai dikhlana paye qurbani
yan tha nau laak ke lashkar may ali ka jaani
ek jaan laakh khareedar thay aazam billah
har taraf zaalimo khoonkhar thay aazam billah
apne rutbay ka kisi ko na shanasa dekha
dekha pyase ne jise khoon ka pyasa dekha

aakhri shart churi tayz ho narmi se rawan
taake tadpe na aziyat se zara bhi haiwan
aakhri sajda udhar karne lagay shahe huda
kundh karta hua khanjar ko idhar shimr chala
tera zarbo se sare sayyede wala kaata
aur mazloom har ek zarb pe deta tha sada
zarb pe zarb lagi kehte thay amma amma
zarbe aakhir pe kaha ho mere abbas kahan
Noha - Hamare Hai Ya Hussain

Nohaqan: Nadeem Sarwar
Download Mp3
Listen Online