ہے وقتِ سحر آخری اکبر کی اذاں ہے
خیمے میں مُسلے پہ سسکتی ہوئی ماں ہے

اے موت مو،ذنکو چہکنے دے ذرا دیر
پھر دل علی اکبر کا ہے اور نوکِ سناں ہے
ہے وقتِ سحر ۔۔۔۔۔

دل تھام کے ہاتھوں سے کچھ اس طرح سے کی آہ
پہچان گئے سب علی اکبر کی یہ ماں ہے
ہے وقتِ سحر ۔۔۔۔۔

کھنچتے ہی سناں ساتھ نکل آئیں گے دونوں
ہے ماں ابھی خیمے میں ابھی دل میں سناں ہے
ہے وقتِ سحر ۔۔۔۔۔

لیلیٰ نے نظر بھر کے نہ دیکھا کبھی اس کو
سب دیکھ کے جیتے ہیں جسے یہ وہ جواں ہے
ہے وقتِ سحر ۔۔۔۔۔

ماریں گے نوید اس لیے اعدا اسے برچھی
صورت ہے محمد کی محمد کی زباں ہے
ہے وقتِ سحر ۔۔۔۔۔


hai waqt e sehar aakhri akbar ki azan hai
qaime may musalle pe sisakti hui maa hai

ay maut mauzin ko chehekne de zara dayr
phir dil ali akbar ka hai aur noke sina hai
hai waqt e sehar....

dil thaam ke haathon se kuch is tarha se ki aah
pehchaan gaye sab ali akbar ki ye maa hai
hai waqt e sehar....

khinchte hi sina saath nikal aayenge dono
hai maa abhi qaimay may abhi dil may sina hai
hai waqt e sehar....

laila ne nazar bhar ke na dekha kabhi is ko
sab dekh ke jeete hai jisay ye wo jawan hai
hai waqt e sehar....

maarenge naved is liye aada isay barchi
surat hai mohamed ki mohamed ki zuban hai
hai waqt e sehar....
Noha - Hai Waqt e Sehar
Shayar: Naved
Nohaqan: Sajid Hussain Jafri
Download Mp3
Listen Online