ہے شام غریباں کی یہ آواز
اے ثانی زہرہ اے ثانی زہرہ

سونا ہوا رن چھا گئی مقتل میں اداسی
سیراب ہوئی خوں سے جو خاک تھی پیاسی
گلشن ہوا پامال ہر اک پھول ہے باسی
خیمے کی نگہباں ہے محمد کی نواسی
دن چھپ گیا رات آگئی سنسان ہے صحرا
اے ثانی زہرہ اے ثانی زہرہ

اللہ کے محبوب تو جنت کو سدھارے
جنگل کی ہوا سنتی ہے اب بین تمہارے
مدہوش ہوئے نیند میں آکاش کے تارے
مارے گئے عباس بھی دریا کے کنارے
اب ان کی جگہ گرد علم دو تم ہی پہرہ
اے ثانی زہرہ اے ثانی زہرہ

مظلوم بہن بھائی کے لاشے پہ کھڑی ہے
لب بند رواں اشکوں سے اشکوں کی لڑی ہے
بے گور و کفن لاش بیاباں میں پڑی ہے
اک حشر کا میدان ہے قیامت کی گھڑی ہے
جب بھیگ گئی یاد تو سراب ہوا گہرا
اے ثانی زہرہ اے ثانی زہرہ

بھائی سے کہو آکے سکینہ کو سلا دو
قاسم کو پکارو علی اکبر کو صدا دو
عباس ذرا آکے ردا سر پہ اڑھا دو
بیٹوں سے کہو عون کے محمل میں بٹھا دو
کل صبح جانا ہے تمہیں چھوڑ کے صحرا
اے ثانی زہرہ اے ثانی زہرہ

جنگل سے سکینہ کو تو لے آئی ہوں جا کر
اصغر کو بھی تم گود میں لے آئو اٹھا کر
بہلائو کہانی کوئی باقر کو سنا کر
کیوں لائی نہ تم خاک سے اکبر کو جگا کر
جنگل بھی پر حول اندھیرا بھی ہے گہرا
اے ثانی زہرہ اے ثانی زہرہ

بی بی سے بعد عرض یہی کہتا ہے اختر
اے نور دل فاطمہ لخت دل حیدر
اے کشئتہ غم سید مظلوم کی خواہر
میں مثل قدب ہوں مجھے کر دیجئے گوہر
تاریح ابد میں میرا پرچم ہو سنہرا
اے ثانی زہرہ اے ثانی زہرہ


hai shame ghariban ki ye awaaz
ay saaniye zehra, ay saaniye zehra

soona hua ran cha gayi maqtal may udaasi
sairaab hui khoon se jo khaak thi pyasi
gulshan hua pamaal har ek phool hai baasi
qaime ki nigehbaan hai mohammad ki nawasi
din chup gaya raat aagayi sunsaan hai sehra
ay saaniye zehra, ay saaniye zehra

allah ke mehboob to jannat ko sidhaare
jangal ki hawa sunti hai ab bain tumhare
madhosh hue neendh may akaash ke taare
maare gaye abbas bhi darya ke kanare
ab unki jagah girde alam do tumhi pehra
ay saaniye zehra, ay saaniye zehra

mazloom behan bhai ke laashe pe khadi hai
lab bandh rawan aankhon se ashkon ki jhadi hai
be-goro kafan laash biyaban may padi hai
ek hashr ka maidan hai qayamat ki ghadi hai
jab bheeg gayi yaad to saraaab hua gehra
ay saaniye zehra, ay saaniye zehra

bhai se kaho aake sakina ko sulado
qasim ko pukaro ali akbar ko sada do
abbas zara aake rida sar par uda-do
beton se kaho aun ke mehmil may bithado
kal suboh ko jaana hai tumhe chod ke sehra
ay saaniye zehra, ay saaniye zehra

jangal se sakina ko to le aayi hoon jaakar
asghar ko bhi tum godh may le aao uthakar
behlao kahani koi baqar ko sunakar
kyon laayi na tum khaak se akbar ko jagakar
jangal bhi hai purhol andhera bhi hai gehra
ay saaniye zehra, ay saaniye zehra

bibi se basad arz yahi kehta hai akhtar
ay noore dile fathima lakhte dile hyder
ay kooshtae gham sayyade mazloom ki khaahar
mai misle qadab hoon mujhe kar dijiye gowhar
tareekhe abad may mera parcham ho sunehra
ay saaniye zehra, ay saaniye zehra
Noha - Hai Shame Ghariban
Shayar: Akhtar
Nohaqan: Ali Zia Rizvi
Download Mp3
Listen Online