صدیوں سے اُٹھا رکھا ہے غازی کے علم کو
باطل نہ جُھکا سکتا علم کو ہے نہ ہم کو

مرنا ہو جسے حق پہ علم پر وہ رکھے ہاتھ
ہو خوف جسے جان کا بڑھائے نہ قدم کو
صدیو ں سے اُٹھا رکھا ۔۔۔

ہے ماتمِ شبیر کا بھرپور یہی حق
ڈھاتا چلا آیا ہے ہر ایک قصرِ ستم کو
صدیوں سے اُٹھا رکھا ۔۔۔

بکھرے ہوئے قرآن کے اوراق پڑے ہیں
اے کرب و بلا تجھ پہ کہاں رکھوں قدم کو
صدیوں سے اُٹھا رکھا ۔۔۔

سر کاٹ کے شبیر کا خیموں کو جلا کر
بے پردہ مسلماں نے کیا اہلِ حرم کو
صدیوں سے اُٹھا رکھا ۔۔۔

اے زائرِ شبیر ادھر آ ادھر آ جا
ٓآنکھوں سے لگا لوں میں تیرے نقشِ قدم کو
صدیوں سے اُٹھا رکھا ۔۔۔


sadiyon se utha rakha hai ghazi ke alam ko
baatil na jhuka sakta alam ko hai na hum ko

marna ho jisay haq pe alam par wo rakhe haath
ho khauf jise jaan ka badaye na qadam ko
sadiyon se utha rakha....

hai matame shabbir ka bharpoor yahi haq
dhaata chala aaya hai har ek qasre sitam ko
sadiyon se utha rakha....

biqre hue quran ke auraaq paday hai
ay karbobala tuhpe kahan rakhun qadam ko
sadiyon se utha rakha....

sar kaat ke shabbir ka qaimo ko jala kar
beparda musalman ne kiya ahle haram ko
sadiyon se utha rakha....

ay zaayire shabbir idhar aa idhar aaja
aankhon se laga loo mai tere naqshe qadam ko
sadiyon se utha rakha....
Noha - Ghazi Ke Alam Ko

Nohaqan: Sachey Bhai
Download Mp3
Listen Online