غریب و بے کس و لاچار آوارہ وطن زینب
مقدر ہو چکے تیرے لیے مہن زینب

نواسی مصطفیٰ کی نورِ چشمِ فاطمہ زہرا
علی کی لاڈلی ہے اور شاہِ دیں کی بہن زینب
غریب و بے کس و ۔۔۔۔۔

دوہائی ہے دوہائی بیلچا ظالم نے مارا ہے
ہوئی ہے جا با حق پردیس میں مجروح تن زینب
غریب و بے کس و ۔۔۔۔۔

تمیمِ بعد گوہر کے نہ خالق نے کیا ستم توڑا
اسیرِ رنج و غم ہے بے دیار و بے وطن زینب
غریب و بے کس و ۔۔۔۔۔

حسین ابنِ علی کا جس شجر میں سر تھا آویزار
اُسی کے زیرِ سایہ خون میں تر ہے خستہ تن زینب
غریب و بے کس و ۔۔۔۔۔

وہ تیری پُشتِ اطہار اور جراہت تعزیانوں کی
ہر اک کو خون رُلاتا ہے تیرا زخمی بدن زینب
غریب و بے کس و ۔۔۔۔۔

کبھی بازارِ کُوفہ میں کبھی قصرِ یزیدی میں
کبھی دربار میں ہے بے ردا شہہ کی بہن زینب
غریب و بے کس و ۔۔۔۔۔

نہ بھولا ہے زمانہ اور نہ بھولے گا قیامت تک
وہ دربارِ یزیدی تیرے بازو اور رسن زینب
غریب و بے کس و ۔۔۔۔۔

دُعا مرزا کی ہے بگڑی کنیزوں کی بنا دیجیئے
تمہارے در پہ آئے آزار ہیں چرخِ گوہن زینب
غریب و بے کس و ۔۔۔۔۔


ghareeb-o-bekaso laachar awara watan zainab
muqaddar ho chuke tere liye ranjo mehan zainab

nawasi mustafa ki noore chashme fatema zehra
ali ki laadli hai aur shahe deen ki behen zainab
ghareeb-o-bekaso....

duhaai hai duhaai baylcha zaalim ne mara hai
huvi hai jaa ba haq pardes may majrooh tan zainab
ghareeb-o-bekaso....

tameeme bad-gohar ke na khalaq ne kya sitam toda
aseere ranjo gham hai be-dayaro be-watan zainab
ghareeb-o-bekaso....

hussain ibne ali ka jis shajar may sar tha aavezaar
usi ke zer-e-saaya khoon may tar hai khastatan zainab
ghareeb-o-bekaso....

wo teri pushte athar aur jarahath taziyano ki
har ek ko khoon rulata hai tera zakhmi badan zainab
ghareeb-o-bekaso....

kabhi bazare koofa may kabhi khasle yazeedi may
kabhi darbar may hai berida sheh ki behen zainab
ghareeb-o-bekaso....

na bhoola hai zamana aur na bhoolega qayamat tak
wo darbare yazeedi tere baazu aur rasan zainab
ghareeb-o-bekaso....

dua mirza ki hai bigdi kaneezo ki bana dije
tumhare dar pa ae azaar hai charkhe gohan zainab
ghareeb-o-bekaso....
Noha - Ghareeb o Bekas
Shayar: Mirza Murtaza Ali
Nohaqan: Mirza Sikander Ali
Download Mp3
Listen Online