گھر سے علی کے رخصت خیر النسائ ہوئی
مولائے کائنات سے زہرا جدا ہوئی
گھر سے علی کے رخصت

زہرا کو ایک پل بھی سکون کا نہ مل سکا
بعد رسول اس پہ وہ جو رو جفا ہوئی
گھر سے علی کے رخصت

حسنین بھی اداس ہیں حیدر بھی ہیں ملول
کعبے کے بام و در پہ جو رونق تھی کیا ہوئی
گھر سے علی کے رخصت

زینب کے سر پہ سائے زہرا نہیں رہا
بیٹی ابھی سے دہر میں کیا بے ردا ہوئی
گھر سے علی کے رخصت

فضا تڑپ کے کہتی ہے سر اپنا پیٹ کر
رخصت جہاں سے خلق کی حاجت روا ہوئی
گھر سے علی کے رخصت

محسن شہید ہو گئے در اس طرح گرا
یاں کربلا سے پہلے بھی اک کربلا ہوئی
گھر سے علی کے رخصت

جس کا جنازہ اٹھا تھا تاریک رات میں
دن میں اس کی لخت جگر بے ردا ہوئی
گھر سے علی کے رخصت

مولا کا گھر اجڑ گیا زہرا گذر گئی
اختر نہ پوچھ کیسی قیامت بپا ہوئی
گھر سے علی کے رخصت


ghar se ali ke ruqsate khairunnisa hui
maula-e-kayanat se zehra juda hui
ghar se ali ke....

zehra ko ek pal bhi sukoon ka na mil saka
baade rasool us pa wo joro jafa hui
ghar se ali ke....

hasnain bhi udaas hai hyder bhi malool
kaabe ke bamo-dar pe jo raunaq thi kya hui
ghar se ali ke....

zainab ke sar pa saayae zehra nahi raha
beti abhi se dehr may kya berida hui
ghar se ali ke....

fizza tadap ke kehti hai sar apna peet kar
ruqsat jahan se khalq ki haajat rawa hui
ghar se ali ke....

mohsin shaheed hogaye dar is tarha gira
yan karbala se pehle hi ek karbala hui
ghar se ali ke....

kiska janaza uth-tha hai tareek raat may
din may usi ki laqte jigar berida hui
ghar se ali ke....

maula ka ghar ujad gaya zehra guzar gayi
akhtar na pooch kaisi qayamat bapa hui
ghar se ali ke....
Noha - Ghar Se Ali Ke
Shayar: Akhtar
Nohaqan: Ali Zia Rizvi
Download Mp3
Listen Online