غم میں بے شیر کے ہوتا ہے کلیجہ پانی
جب بھی سُنتے ہیں کے شبیر نے مانگا پانی

کربلا میں کوئی انسان تھا ورنہ
وقتِ ذبح تو کوئی شہہ کو پلاتا پانی

دستِ عباس کٹے مشک چھِدی پیاسوں کی
روزِ عاشورہ ہوا خون کا پیاسا پانی

اک علی اصغرِ معصوم کے دو ہیں قاتل
تیر نے قتل کیا جان سے مارا پانی

فطرتاً تشنہ دہانی ہے اسی سے ثابت
ذکر پیاسوں کا چھڑا آنکھ سے نکلا پانی

قاتلوں ہی کی طرح دشمنِ جانی نکلا
تھا سکینہ کے لیے پیاس کا دریا پانی

جو کھلاتے نہیں بے درد دوا عابد کو
کب پلائیں گے وہ بیمار کو ٹھندا پانی

نقش ہے شہہ کی وصیت علی فطرت دل پر
یاد کر لینا مجھے جب کبھی پینا پانی


gham may baysheer ke hota hai kaleja pani
jab bhi sunte hai ke shabbir ne maanga pani

karbala may koi insan tha warna
waqte zibha to koi sheh ko pilaata pani

daste abbas kate mashk chidi pyaso ki
roze ashoora hua khoon ka pyasa pani

ek ali asghare masoom ke do hai qaatil
teer ne qatl kiya jaan se maara pani

fitratan tashna-dahani hai isi se saabit
zikr pyaso ka chida aankh se nikla pani

qaatilon hi ki tarha dushmane jaani nikla
tha sakina ke liye pyas ka darya pani

jo khilate nahi be-dard dawa abid ko
kab pilayenge wo bemaar ko thanda pani

naqsh hai sheh ki wasiyat ali fitrat dil par
yaad karlena mujhe jab kabhi peena pani
Noha - Gham May Baysheer
Shayar: Maulana Ali Fitrat
Nohaqan: Mirza Sikander Ali
Download Mp3
Listen Online