عصر کا وقت ہے شبیر کی آتی ہے صدا
چور زخموں سے بدن ہوگیا اماں میرا
اپنی آغوش میں اب مجھ کو چھپالو اماں
ارے دھوپ ہے اپنی عبا آن کے ڈالو اماں
گرم ریتی پہ میں گِرتا ہوں سنبھالو اماں

تھک گیا لاش اُٹھا کر میں بھرے لشکر کی
لاش قاسم کی میں لایا ہوں کبھی اکبر کی
خود بنائی ہے لحد میں نے علی اصغر کی
دو تصلّی مجھے سینے سے لگا لو اماں
گرم ریتی ۔۔۔۔۔

تیر تلواروں سے خنجر سے بدن زخمی ہے
خاک جلتی ہے تو زخموں میں چبھن ہوتی ہے
میرے زخموں سے میرے دل کا لہو جاری ہے
اپنی چادر کو میرے زخموں پہ ڈالو اماں
گرم ریتی ۔۔۔۔۔

میرا عباس خفا ہوگیا اماں مجھ سے
وہ نہیں آیا اُٹھا لایا تھا بازو اُس کے
آپ اک کام کریں نہر کنارے جاکے
میرے رُوٹھے ہوئے بھائی کو منالو اماں
گرم ریتی ۔۔۔۔۔

چکیّاں پیسی ہیں گودی میں بیٹھا کر مجھ کو
جاگتی ررہتی تھیں زانوں پہ سُلا کر مجھ کو
لوریّاں دیتی تھیں جھولے میں جھلا کر مجھ کو
اک دفا گود میں پھر اپنی سُلا لو اماں
گرم ریتی ۔۔۔۔۔

اور کچھ دیر کا مہمان ہوں تم پاس رہو
ریت زخموں میں ہے آنچل سے اُسے صاف کرو
آتی ہے رونے کی آوازِ سکینہ دیکھو
جائو تم جا کے سکینہ کو سنبھالو اماں
گرم ریتی ۔۔۔۔۔

دیکھو وہ آگ لگی شامِ غریباں آئی
دیکھو گھبرا کے نکل آئی میری ماں جائی
دیکھو بے ہوش سکینہ کا پڑا ہے بھائی
جائو سجاد کو شعلوں سے نکالو اماں
گرم ریتی ۔۔۔۔۔

ہے گزارش میری تم سے تو اب اتنی مادر
اماں بابا کی قسم ڈھانپ لو منہ پر چادر
دیکھا جائے گا نہ اب تم سے یہ خونی منظر
قتل ہوتا ہوں نگاہوں کو ہٹالو اماں
گرم ریتی ۔۔۔۔۔

ہوگی جب حشر کے میدان میں مجلس برپا
فرشِ غم شہہ کا بچھائیں گی جنابِ زہرا
آئے گی حضرتِ شبیر کی ریحان صدا
آج جی کھول کے تم اشک بہا لو اماں
گرم ریتی ۔۔۔۔۔


asr ka waqt hai shabbir ki aati hai sada
chur zakhmo se badan hogaya amma mera
apni aagosh may ab mujko chupalo amma
arey dhoop hai apni abaa aan ke dalo amma
garm reti pa me girta hu sambhalo amma

thak gaya lashay utha kar mai bhare lashkar ki
laash qasim ki mai laaya tha kabhi akbar ki
khud banayi thi lahad maine ali asghar
do tasalli mujhe seene se lagalo amma
garm reti……………

taygh talwaron se, khanjar se badan zakhmi hai
khaak jalti hai to zakhmo may chubhan hoti hai
mere zakhmo se mere dil ka lahoo jaari hai
apni chaadar ko mere zakhmon pe daalo amma
garm reti……………..

mera abbas khafa hogaya amma mujhse
wo nahi aaya utha laaya tha baazu uske
aap ek kaam karay nehr kanare jaake
mere roothe huwe bhaai ko manalo amma
garm reti…………….

chakkiya peesi hai godhi may bithakar mujko
jaagti rehti thi zaanu pe sulaakar mujko
loriya deti thi jhoolay may jhulakar mujko
ek dafa godh may phir apni sulalo amma
garm reti……………..

aur kuch dayr ka mehmaan hoo tum paas raho
rayt zakhmo may hai aanchal se usay saaf karo
aati hai rone ki aawaz-e-sakina dekho
jao tum jaake sakina ko sambhalo amma
garm reti……………..

dekho wo aag lagi sham e ghariba aayi
dekho ghabra ke nikal aayi meri maajayi
dekho behosh sakina ka pada hai bhai
jao sajjad ko sholon se nikalo amma
garm reti……………..

hai ghuzarish meri tumse to ab itni maadar
amma baba ki kasam dhaamp lo moo par chadar
dekha jayega na ab tumse ye khooni manzar
qatl hota hoo nigahon ko hataalo amma
garm reti………………

hogi jab hashr ke maidan may majlis barpa
farsh-e-gham sheh ka bichayegi janabe zehra
aayegi hazrat-e-shabbir ki rehaan sadaa
aaj jee khol ke tum ashk bahalo amma
garm reti………………..
Noha - Garm Reti Pa Mai
Shayar: Rehaan Azmi
Nohaqan: Nadeem Sarwar
Download Mp3
Listen Online