جب رن میں آئے حیدر و جعفر کے مہلکا
اور بے کسوں پہ ٹوٹ پڑی فوجِ اشقیائ
ناگاہ اک ضعیفہ کھُلے سر برہنہ پا
خیمے کے در پہ آئی دل افگار وغمزدہ
دیکھاجو آہ بھر کے سوئے نہرِ علقمہ
نیزوں اُچھل کے رہ گیا پانی فرا،ت کا
دو ننھے ننھے لاشے بصد گریہ و بُقا
لاتے ہوئے دیکھائی دیئے شاہِ کربلا
سر پیٹنے لگی وہ مصیبت مبتلا
پوچھا جو بیبیوں نے لبِ نہر کیا ہوا

فضّہ نے کہا عون و محمد گئے مارے
دریا کے کنارے
ماموں پہ فدا ہو گئے زینب کے دُلارے
دریا کے کنارے

سُن کر یہ صدا ثانیئے زہرا یہ پُکاری
اماں گئی واری
پیاسے ہی میرے لاڈلے دُنیا سے سدھارے
دریا کے کنارے
فضّہ نے کہا ۔۔۔

دیکھیں گے نہ پانی کی طرف آنکھ اُٹھا کے
وعدہ تھا یہ ماں سے
شہزادوں نے دم توڑ دیا پیاس کے مارے
دریا کے کنارے
فضّہ نے کہا ۔۔۔

مقتل کے اندھیرے میں ہے اس گھر کے اُجالے
دو پھول سے لاشے
جو چاند کے ٹکڑے تھے بنے ٹوٹے ہوئے تارے
دریا کے کنارے
فضّہ نے کہا ۔۔۔

خیمے میں ابھی لانے کی جلدی نہیں لوگو
اکبر سے یہ کہہ دو
بچوں کو میرے بھائی کا صدقہ تو اُتارے
دریا کے کنارے
فضّہ نے کہا ۔۔۔

اچھا ہے کے سوتے رہے منہ خاک پہ رکھ پہ
سائے میں علم کے
عباس کے قدموں میں رہے لال ہمارے
دریا کے کنارے
فضّہ نے کہا ۔۔۔

گھر لُٹتا ہے زینب کا قیامت کی گھڑی ہے
خاموش کھڑی ہے
سُنتا نہیں کوئی تو کیسے جا کے پُکارے
دریا کے کنارے
فضّہ نے کہا ۔۔۔

شاہر حرمِ شِہ میں کُہرام بپاہے
زینب کی صدا ہے
میں لُٹ گئی پردیس میں ہائے ہائے میرے پیارے
دریا کے کنارے
فضّہ نے کہا ۔۔۔


jab ran may aaye hydero jafar ke mehlaqa
aur bekaso pe toot padi fauje ashkiyan
nagaah ek zaeefa khule sar barehna pa
qaime ke dar pe aayi dilafgaro gham zada
dekha jo aah bharke suye nehre alqama
naizo uchal ke rehgaya pani furaat ka
do nanhe nanhe laashe basad girya o buka
laate hue dikhayi diye shahe karbala
sar peetne lagi wo musibat mubtila
poocha jo bibiyo ne labe nehr kya hua

fizza ne kaha auno mohamed gaye maare
darya ke kanare
mamu pe fida hogaye zainab ke dulaare
darya ke kanare

sunkar ye sada saaniye zehra ye pukari
amma gayi wari
pyase hi mere laadle dunya se sidhaare
darya ke kanare
fizza ne kaha....

dekhenge na pani ki taraf aankh uthaake
wada tha ye maa se
shehzado ne dam tod diya pyas ke maare
darya ke kanare
fizza ne kaha....

maqtal ke andhere may hai is ghar ke ujaale
do phool se laashe
jo chand ke tukde thay banay toote hue taare
darya ke kanare
fizza ne kaha....

qaime may abhi laane ki jaldi nahi logo
akbar se ye kehdo
bachon ko mere bhai ka sadqa to utaare
darya ke kanare
fizza ne kaha....

acha hai ke sotay rahe moo khaak pe rakh ke
saaye may alam ke
abbas ke qadmo may rahe laal hamare
darya ke kanare
fizza ne kaha....

ghar lut-ta hai zainab ka qayamat ki ghadi hai
khamosh khadi hai
sunta nahi koi to kise jaake pukaare
darya ke kanare
fizza ne kaha....

shahir harame shah may kohraam bapa hai
zainab ki sada hai
mai lutgayi pardes may hai hai mere pyare
darya ke kanare
fizza ne kaha....
Noha - Fizza Ne Kaha
Shayar: Sahir Faizabadi
Nohaqan: Waseem Hussain Rizvi
Download Mp3
Listen Online