فرس کی ذین سے بے شک اُترگئے ہیں حسین
زمین ڈھونڈ رہی ہے کدھر گئے ہیں حسین

کرے گا شمر کا خنجر تو صرف سر کو جُدا
وگرنہ لاشہِ اکبر پہ مر گئے ہیں حُسین
فرس کی ذین سے۔۔۔

سرِ بُریدہ کٹے ہونٹ خون چہرے پر
عجیب حال میں شیریں کے گھر گئے ہیں حسین
فرس کی ذین سے۔۔۔

میں ملنے شام کے زندان میں آئوں گا تجھ سے
یہ بات آخری بیٹی سے کر گئے ہیں حسین
فرس کی ذین سے۔۔۔

کہیں ہیں قاسم و عباس اور کہیں اکبر
کہاں کہاں تیرے ٹکڑے بکھر گئے ہیں حسین
فرس کی ذین سے۔۔۔

قضائ کے بعد بھی بھائی بہن کے ساتھ رہا
جدھر جدھر گئی زینب اُدھر گئے ہیں حسین
فرس کی ذین سے۔۔۔

کسی نے مارا ہے پتھر بہن کے کیا اکبر
جو کرتے کرتے تلاوت ٹھہر گئے ہیں حسین
فرس کی ذین سے۔۔۔


faras ki zeen se beshak utar gaye hai hussain
zameen dhoond rahi hai kidhar gaye hai hussain

karega shimr ka khanjar to sirf sar ko juda
wagar na laashae akbar pe margaye hai hussain
faras ki zeen se...

sare bureeda katay hont khoon chehre par
ajeeb haal may shireen ke ghar gaye hai hussain
faras ki zeen se...

mai milne shaam ke zindan may aaunga tujhse
ye baat aakhri beti se kar gaye hai hussain
faras ki zeen se...

kahin hai qasim o abbas aur kahin akbar
kahan kahan tere tukde bikhar gaye hai hussain
faras ki zeen se...

qaza ke baad bhi bhai behan ke saath raha
jidhar jidhar gayi zainab udhar gaye hai hussain
faras ki zeen se...

kisi ne maara hai pathar behan ke kya akbar
jo karte karte tilaawat teher gaye hai hussain
faras ki zeen se...
Noha - Faras Ki Zeen Se
Shayar: Hasnain Akbar
Nohaqan: Mir Hassan Mir
Download Mp3
Listen Online