سُلا کے قبر میں بے شیر کو حسینِ غریب
ہر اک شہید کے لاشے پہ آئے روتے ہوئے
لبِ حسین سے سُوئے فلک گئی یہ صدا
اک قافلہ لایا تھا میں

اُس قافلے میں تھا علی اکبر سا اک بیٹا جواں
عباس جیسا بھائی تھا ، معصوم اصغر بے زباں
کچھ بیبیاں تھی ساتھ میں مہظر میں جن کا نام تھا
اک قافلہ لایا۔۔۔۔۔

یہ قافلہ کیسے لُٹا یہ سوچ کے میں رو دیا
پالا تھا جن کو ناز سے کر ب و بلا میں کھو دیا
اُن سب کے لاشے سامنے تھے اور ہونٹوں پر بُقا
اک قافلہ لایا۔۔۔۔۔

کڑیل جوان کی لاش ہاتھوں پر اُٹھائی ہے ابھی
اک بے زباں کی قبر بھی میں نے بنائی ہے ابھی
سماں میرے قتل کا کرتے ہیں اب یہ اشقیائ
اک قافلہ لایا۔۔۔۔۔

پیاسے میرے اطفال ہیں بہتا ہے دریا سامنے
اک بے وطن کودشت میں لُوٹا ہے فوجِ شام نے
روتی ہے میرے چاہنے والوں کے لاشوں پر قضا
اک قافلہ لایا۔۔۔۔۔

قسمت میری لے کر مجھے کرب و بلا تک آ گئی
اب بڑھتے بڑھتے بات زینب کی ردا تک آ گئی
ہو جائوں گا میں قتل تو چھِن جائے گی اُس کی ردا
اک قافلہ لایا۔۔۔۔۔

کچھ دیر میں خنجر لعین کا حلق پر چل جائے گا
اور بعد میرے خیمئہ سادات بھی جل جائے گا
کیا یوں کوئی پردیس میں آ کر لوائے کربلا
اک قافلہ لایا۔۔۔۔۔

جب قتل میں ہو جائوں گا شامِ غریباں آئے گی
سیدانیوں کے قلب پہ تازہ قیامت ڈھائے گی
اُس وقت اُٹھے گی میری لاشِ بُریدہ سے صدا
اک قافلہ لایا۔۔۔۔۔

لاشے سبھی رہ جائیں گے جلتی زمیں پر بے کفن
قیدی بنے گی مصطفیٰ کی آل پابندِ رسن
راہوں میں روتا جائے گا بیماریہ کر کے بُقا
اک قافلہ لایا۔۔۔۔۔

رہ جائے گی بالی سکینہ کی فُغاں زندان میں
قیدی رہیں گی سال بھر سیدانیاں زندان میں
سجاد میرا قید سے جائے گا یہ کہتا ہوا
اک قافلہ لایا۔۔۔۔۔

عرفان حیدر ہو گئی اشکوں سے آنکھیں نم میری
ایسے مصائب شاہ کے لکھتا ہے مظہر عابدی
فقر  بس اکمیں سمت کر آ گئی ہے کربلا
اک قافلہ لایا۔۔۔۔۔


sula ke qabr may baysheer ko hussain e ghareeb
har ek shaheed ke laashe pe aaye rote huve
labe hussain se suye falak gayi ye sada
ek khafela laaya tha mai

us khafele may tha ali akbar sa ek beta jawan
abbas jaisa bhai tha, masoom asghar be-zuban
kuch bibiyan thi saath may mehzar may jinka naam tha
ek khafela laaya....

ye khafela kaise luta ye soch ke mai ro diya
paala tha jinko naaz se karbobala may kho diya
un sab ke laashe saamne thay aur hoton par buka
ek khafela laaya....

kadiyal jawan ki laash haathon par uthayi hai abhi
ek be-zuban ki qabr bhi maine banayi hai abhi
samaan mere qatl ka karte hai ab ye ashkiya
ek khafela laaya....

pyase mere atfal hai behta hai darya saamne
ek be-watan ko dasht may loota hai fauje shaam ne
roti hai mere chaahne walo ke laasho par qaza
ek khafela laaya....

kismat meri lekar mujhe karbobala tak aagayi
ab badte badte baat zainab ki rida tak aagayi
ho jaunga mai qatl to chin jayegi uski rida
ek khafela laaya....

kuch dayr may khanjar layeen ka halq par chal jayega
aur baad mere qaima-e-sadaat bhi jal jayega
kya yun koi pardes may aa kar luaye karbala
ek khafela laaya....

jab qatl mai ho jaunga shame ghariban aayegi
saydaniyo ke qalb pe taaza qayamat dhayegi
us waqt uthegi meri laashe burida se sada
ek khafela laaya....

laashe sabhi rehjayenge jalti zameen par bekafan
qaidi banegi mustufa ki aal pa-bande rasan
raahon may rota jayega bemaar ye karke buka
ek khafela laaya....

reh jayegi bali sakina ki fugan zindan may
qaidi rahengi saal bhar saydaniya zindan may
sajjad mera qaid se jayega ye kehta huwa
ek khafela laaya....

irfan haider ho gayi ahskon se aankhein nam meri
aise masaib shah ke likhta hai mazhar abidi
bas ek fiqre may simat kar aagayi hai karbala
ek khafela laaya....
Noha - Ek Khafela Laaya Tha
Shayar: Mazhar Abidi
Nohaqan: Irfan Haider
Download Mp3
Listen Online