پڑھکے مہظر جب مدینے سے چلا وہ قافلہ
قاسم و عباس واکبر اور سبطِ مصطفےٰ
ساتھ میں زینب سکینہ اور روحِ فاطمہ
سیّدِ سجاد اصغر ساتھ صغرا کی دُعا
قافلہ تھا ایک لیکن دو تھے روحِ قافلہ
اک علی کی لاڈلی تھی ا ک علی کا لال تھا

ہائے وہ کس شان سے نکلے تھے سُوئے کربلا
ساتھ عباسِ جری قبضے میں تیغِ مرتضیٰ
مرکزِتعظیم تھی دو ہستیاں ہر ایک کا
اک علی کی لاڈلی ۔۔۔

اپنے بیٹوں کو فدا بھائی پہ زینب نے کیا
بھائی مرکے بھی نہ زینب سے ہوا اک پل جدا
سر برہنہ وہ چلی وہ سر سرِ نیزہ چلا
اک علی کی لاڈلی ۔۔۔

سر دیا بھائی نے چادر دی بہن نے دین کو
نہ بہن ایسی نہ ایسا بھائی ہوگا مومنوں
جس نے سر اُونچا کیا ہے بانیئ اسلام کا
اک علی کی لاڈلی ۔۔۔

سربرہنہ تھی بہن تو بھائی بھی تھا بے کفن
بھائی کے بازو جدا بہنا کے بازو میں رسن
سر کیا دونوں نے مل کر کربلا کا معرکہ
اک علی کی لاڈلی ۔۔۔

بھائی نے چھ ماہ کے بچے کی میت گاڑ کر
اک نئی تاریخ لکھ دی کربلا کی خاک پر
شکر کا سجدہ جواں بیٹے کے مرنے پر کیا
اک علی کی لاڈلی ۔۔۔

تھی رسن بستہ بہن لیکن جلالت الاماں
خطبہئ زینب سے لرزاں تھے زمین و آسماں
رکھ دیا تختہ پلٹ کے جس نے ملکِ شام کا
اک علی کی لاڈلی ۔۔۔

بھائی خاک و خوں میں غلطاں اور زندانی بہن
آبروئے مصطفےٰ اک آبروئے پنجتن
دوڑتاتھا جسم میں دونوں کے شیرِسیّدہ
اک علی کی لاڈلی ۔۔۔

تشت میںبھائی کا سر زینب بھرے دربار میں
کوئی بھی انساں نہیں تھا لشکرِ کفّار میں
خاک مدفن میں اُڑاتے تھے نبی ئِ دوسرا
اک علی کی لاڈلی ۔۔۔

آج تک قائم ہے جن کے دم سے دینِ مصطفےٰ
نام جن کا شامل ِجزوے عبادت ہوگیا
قدسیانِ عرش کی ریحان آتی ہے صدا
اک علی کی لاڈلی ۔۔۔


badke mehzar jab madine se chala wo khaafila
qasimo abbaso akbar aur sibte mustufa
saath may zainab sakina aur roohe fathima
sayyade sajjado asghar saath sughra ki dua
khaafila tha ek lekin do thay roohe khaafila
ek ali ki laadli thi ek ali ka laal tha

haaye wo kis shaan se nikle thay suve karbala
saath abbase jari khabze may tayghe murtuza
markaze tazeem thi do hastiya har ek ka
ek ali ki laadli....

apne beto ko fida bhai pe zainab ne kiya
bhai marke bhi na zainab se huwa ek pal juda
sarbarehna wo chali wo par sare naiza chala
ek ali ki laadli....

sar diya bhai ne chadar di bahan ne deen ko
na bahan aisi na aisa bhai hoga momino
jisne sar uncha kiya hai baani-e-islam ka
ek ali ki laadli....

sarbarehna thi behan to bhai bhi tha be-kafan
bhai ke bazu juda behna ke bazu may rasan
tar kiya dono ne milkar karbala ka muarika
ek ali ki laadli....

bhai ne cheh maah ke bache ki mayyat gaad kar
ek nayi tareekh likhi karbal ki khaakh par
shukr ka sajda jawabe de ke marne par kiya
ek ali ki laadli....

thi rasan basta behan lekin jalalat allama
khutbaye zainab se larzae thay zameeno aasman
rak diya thakhta palat ke jisne mulke shaam ka
ek ali ki laadli....

bhai khaakh o khoon may ghal-tha aur zindani bahan
aabroo-e-mustufa ek aabroo-e-panjatan
daudta tha jism may dono ke sheere sayyeda
ek ali ki laadli....

tasht may bhai ka sar zainab bhare darbaar may
koi bhi insaan nahi tha lashkare kuffar may
khaak madfan may udaate thay nabiye do sara
ek ali ki laadli....

aaj tak qayam hai jinke dam se deene mustufa
naam jinka shaamile juzbe ibaadat hogaya
khud siyane arsh ki rehaan aati hai sada
ek ali ki laadli....

\
Noha - Ek Ali Ki Laadli
Shayar: Rehaan Azmi
Nohaqan: Nadeem Sarwar
Download Mp3
Listen Online