دیکھے تو کوئی رونق مقتل میں ذرا آکے
شبیر کے آنے سے دن پھر گئے صحرا کے
دیکھے تو کوئی

خیمے سے جنازے کی رخصت کا سا منظر ہے
آئیں گے نہ پھر اکبر میدان میں اب جاکے
دیکھے تو کوئی

پامال سومے اسپا ایسا نہ ہوا کوئی
بکھرے ہوئے ٹکڑے ہیں ہر سمت میں دلہا کے
دیکھے تو کوئی

اے عزم طلب غازی اب کوئی نہیں باقی
عباس ذرا آنسوں رک جانے دو آپا کے
دیکھے تو کوئی

اموں کے کبھی قصے بابا کی کبھی باتیں
بچی کو سلاتی ہے زینب یہی بہلا کے
دیکھے تو کوئی

زینب کی صدا سن کر خنجر تلے سجدے سے
خیمے کی طرف دیکھا شبیر نے جب آکے
دیکھے تو کوئی

شہید یہ عزا خانے ویران نہیں ہوں گے
تا حشر بھی گر دشمن مارے ہمیں آ آکے
دیکھے تو کوئی


dekhe to koi raunaq maqtal may zara aake
shabbir ke aane se din phirgaye sehra ke
dekhe to koi....

qaimay say janaze ki ruqsat ka sa manzar hai
aayenge na phir akbar maidan may ab ja ke
dekhe to koi....

pamaal sumay aspa aisa na hua koi
bikhray hoey tukde hai har simt may dulha ke
dekhe to koi....

ay azm talab ghazi ab koi nahi baakhi
abbas zara aansu ruk jane to do aaqa ke
dekhe to koi....

ammu ke kabhi qissay baba ki kabhi baatein
bachi ko sulaati hai zainab yehi behlaake
dekhe to koi....

zainab ki sada sunkar khanjar talay sajde se
qaimay ki taraf dekha shabbir ne jab aake
dekhe to koi....

shahid ye azakhane veeran nahi hongay
ta-hashr bhi gar dushman maare hamein aa aa ke
dekhe to koi....
Noha - Dekhe To Koi
Shayar: Shahid Jafer
Nohaqan: Ali Yazdan
Download mp3
Listen Online