زمانہ ٹھہرا دیکھ کر ہیبتِ عباس
انتہا یہ ہے کہ بہتا ہوا دریا ٹھہرا

ہے علمدار تیری ہمت و جُرأ ت کی مثال
دور پانی سے تیرے جسم کا سایہ ٹھہرا
دیکھ کر ہیبتِ ۔۔۔

کربلا کی ہے زمیں اور فرشتوں کی جبیں
سجدہ گاہ ہے دو جہاںشاہ کا روضہ ٹھہرا
دیکھ کر ہیبتِ ۔۔۔

کس طرح اب دلِ بیتاب کو بہلائے ماں
گود خالی ہے نظر آتا ہے جھولا ٹھہرا
دیکھ کر ہیبتِ ۔۔۔

جب سکینہ کو راہِ شام میں گرتے دیکھا
تھا رواں جس پہ سرِ شاہ  وہ نیزہ ٹھہرا
دیکھ کر ہیبتِ ۔۔۔

تڑپا خیمے میں جو آواز کماںکی سُن کر
بنتا تھا عمر وہ مادر کا کلیجہ ٹھہرا
دیکھ کر ہیبتِ ۔۔۔


zamana tehra dekh kar haibate abbas
inteha ye hai ke behta hua darya tehra

hai alamdar teri jurrato himmat ke misaal
door pani se tere jism ka saaya tehra
dekh kar haibate....

karbala ki hai zameen aur farishto ki jabeen
sajdaga hai to kahan shah ka rauza tehra
dekh kar haibate....

kis tarha ab dile betaab ko behlaye maa
godh khaali hai nazar aata hai jhoola tehra
dekh kar haibate....

jab sakina ko rahe shaam may girte dekha
kaarwan jispe sare shah wo naiza tehra
dekh kar haibate....

tadpa qaime may jo awaaz kamaki sunkar
binta tha umr wo madar ka kaleja tehra
dekh kar haibate....
Noha - Dekh Kar Haibate

Nohaqan: Sachey Bhai
Download Mp3
Listen Online