فاطمہ کے چین نے ، علی کے نُور عین نے
باخُدا حُسین نے،دین کو بچا دیا

حرف آ رہا تھا دینِ مُصطفٰی کے نام پر
ممبرِ رسول بِک رہا تھا تختِ شام پر
دین کی اساس نے دستِ حق شناس نے
اُمتِ محمدی کو خواب سے جگا دیا
دین کو بچا دیا
فاطمہ کے چین ۔۔۔

ہر طرف سے بندھ ہو چُکے تھے حق کے راستے
خون مانگتا تھا دین زندگی کے واسطے
دین کے اُصول نے نائبِ رسول نے
زندگی کا قرض اپنے خون سے چُکا دیا
دین کو بچا دیا
فاطمہ کے چین ۔۔۔

امیرِ شام بن گیا تھا سانپ آستین کا
اُس روی کے سر پہ رکھ رہا تھا تاج دین کا
بادشاہِ دین نے بوریا نشین نے
آرزوئے خُسروی کو خاک میں ملا دیا
دین کو بچا دیا
فاطمہ کے چین ۔۔۔

پھر سے شرک کی طرف پلٹ نہ جائے آدمی
گُناہِ مُستقیم سے بھٹک نہ جائے آدمی
شاہِ تشنہ کام نے وقت کے امام نے
حق کی راہ پر لہو سے اک دیا جلا دیا
دین کو بچا دیا
فاطمہ کے چین ۔۔۔

حلقِ بے زبان سے ظُلم کی کمان توڑ دی
شہ رگِ گُلو سے خنجروں کی دھار موڑ دی
نازشِ حیات نے فخرِ کائنات نے
سر کٹا کے آدمی کا سر بلند کر دیا
دین کو بچا دیا
فاطمہ کے چین ۔۔۔

بڑھتے بڑھتے بات جب اُصولِ دیں پہ آگئی
اور یزیدیت کی شکل میں عروج پا گئی
بڑھ کے پھر دلیر نے شیرِ حقِ شیر نے
دو پہر میں تخت و تاج قصرِ شام ڈھا دیا
دین کو بچا دیا
فاطمہ کے چین ۔۔۔


fatema ke chain ne, ali ke noore ain ne
bakhuda hussain ne, deen ko bacha liya

harf aa raha tha deene mustufa ke naam par
mimbare rasool bikh raha tha takhte shaam par
deen ki asaas ne daste haq shanaas ne
ummate mohamadi ko khaab se jaga diya
deen ko bacha diya
fatema ke chain....

har taraf se band ho chuke thay haq ke raaste
khoon maangta tha deen zindagi ke waaste
deen ke usool ne nayabe rasool ne
zindagi ka karz apne khoon se chuka diya
deen ko bacha diya
fatema ke chain....

ameere shaam bangaya tha saamp aasteen ka
us usravi ke sar pe rakha arah tha taaj deen ka
baadshahe deen ne goriya nasheen nay
aarzu-e khud rawi ko khaak may mila diya
deen ko bacha diya
fatema ke chain....

phir se shirk ki taraf palat na jaaye aadmi
gunaahe mustaqeem se bhatak na jaaye aadmi
shahe tashnakaam ne waqt ke imam ne
haq ki raah par lahoo se ek diya jala diya
deen ko bacha diya
fatema ke chain....

halqe bezaban se zulm ki kamaan todh di
zehra ke guloo se khanjaro ki dhaal modh
naazishe hayaat ne asre kaayanat ne
sar kata ke aadmi ka sar baland kar diya
deen ko bacha diya
fatema ke chain....

badte badte baat jab usoole deen pe aagayi
aur yazeediyat ki shakl may urooj pa gayi
badke phir dilayr ne shere haq ke sher ne
do pahar may taqto taaj qasre shaam dha diya
deen ko bacha diya
fatema ke chain....
Noha - Deen Ko Bacha Liya

Nohaqan: Sachey Bhai
Download Mp3
Listen Online